GK Communications Pvt. Ltd
Edition :
  ادارتی مضمون
امن کی پکار سنئے


یہ بات روز روشن کی طرح عیاں ہے کہ مسئلہ کشمیر کی وجہ سے ہندوستان اور پاکستان کے مابین گزشتہ ۶۶ برسوں سے حالات نہایت ہی کشیدہ اور غیر دوستانہ رہے۔تقسیم ہند کے وقت جو فارمولہ اپنایا گیا تھااُسی  سے انحروف کی وجہ سے کشمیر کا تنازعہ اُٹھ کھڑا ہوا جودونوں غریب ملکوں کے گلے کی ہڈی بن گیا ۔

نتیجے کے طور پر نہ صرف کئ بار تباہ کن جنگیں ہوئیں بلکہ دونوں ملکوں نے دفاع کے فیلڈ میںایک دوسرے پر سبقت لے جانے کی غرض سے اپنا اپنا قیمتی ملکی و قومی سرمایہ فوجی طاقت بڑھانے میں صرف کیا اور کر رہے ہیں۔اس طرح جہاں ہندوستان میں غریبی کی سطح دن بہ دن نیچے گرتی گئ وہاں پاکستان کا اس سے بھی زیادہ بُرا حال ہوگیا۔ طرفہ تماشہ دیکھئے کہ انہوںنے نیوکلیائی دھماکوں کاشوق بھی پورا کر ڈالا۔

 اس ساری کا رستانی کی وجہ بظاہر مسئلہ کشمیر ہی ہے ۔ ایک ملک کشمیر کو اٹوٹ انگ اور دوسرا شہ رگ کہتا ہے۔ ( ویسے اب یہ لفظ پار کے منہ سے کم ہی نکلتا ہے ) ۔اس پیچیدہ مسئلے کا کو ئی متفقہ حل ڈھونڈنے میں دونوں لیت ولعل سے کام لے کر خطے کو بارود کا ڈھیر بنایا جا چکے ہیں جو کسی بھی وقت خدانخواستہ نہ صرف برصغیر کوبلکہ پوری دنیا کو اپنی لپیٹ میں لے کر بھسم کر دے گا۔ گزشتہ دنوں سر حدوں پر دوطرفہ ماراماری اسی جانب ایک بلیغ اشارہ ہے۔

اصل بات یہ ہے کہ جب تک مسئلہ کشمیر کا بھوت سر راہ کھڑاہے اس وقت تک خطے کی صورتحال برابر کشیدہ اور پُر تناؤ رہے گی ۔ لہٰذا امن کے مفاد میں ہندوستان اور پاکستان کی حکومتوں کودوٹ بنک سیا ست سے بالا تر ہوکر کشمیر حل معرض وجود میں لانے سے کو ئی پس وپیش نہیں کر نا چا ہیے ۔ اس وقت تک آ ر پار خوشگوارتعلقات قایم ہوسکتے ہیں اور نہ ہی بحالی ٔ اعتماد کا کو ئی معنی مطلب نکل سکتاہے ۔

اشفاق پرواز

گوفہ بل کنزر ٹنگمرگ

 

یہ صفحہ ای میل کیجئے پرنٹ کریں












سابقہ شمارے
  DD     MM     YY    


 


© 2003-2014 KashmirUzma.net
طابع وناشر:رشید مخدومی  |  برائے جی کے کمیونی کیشنزپرائیوٹ لمیٹڈ  |  ایڈیٹر :فیاض احمد کلو
ایگزیکٹو ایڈیٹر:جاوید آذر  | مقام اشاعت : 6 پرتاپ پارک ریذیڈنسی روڑسرینگرکشمیر
RSS Feed

GK Communications Pvt. Ltd
Designed Developed and Maintaned By