GK Communications Pvt. Ltd
Edition :
  صفحہ اوّل
رسوئی گیس صارفین کو راحت
رعایتی سلنڈروں کی تعداد 9کردی گئی

نئی دلی//رسوئی گیس صارفین کو بڑی راحت دیتے ہوئے مرکزی حکومت نے یکم اپریل 2013سے رعایتی گیس سلنڈروں کی تعداد 6سے 9 فی سال کرنے کو باضابطہ طور پرمنظوری دے دی ہے تاہم رسوئی گیس اور تیل خاکی کی قیمتوں میں اضافے کا معاملہ التواء میں ڈال دیا گیا۔ اس کے ساتھ ہی مرکزی حکومت نے ریاستی سرکاروں کو اس بات کا اختیار دیا ہے کہ وہ ڈیزل کی قیمتوں میں وقتاً فوقتاً اضافہ کر سکتی ہیں۔ جمعرات کومرکزی وزیر پیٹرولیم ایم وریپا موئیلی نے نامہ نگاروںکے ساتھ بات چیت کے دوران کہا کہ وزیر اعظم ہند کی صدارت میں منعقد ہوئی میٹنگ کے دوران عوامی مطالبات اور مشکلات کو مد نظر رکھتے ہوئے رعایتی رسوئی گیس سلنڈروں کی تعداد 6سے9کرنے کا فیصلہ کیا گیا اور یہ فیصلہ یکم اپریل سے نافذ العمل ہو گا۔مرکزی کابینہ فیصلے میں بتایا گیا ہے کہ گیس صارفین کو ستمبر 2012سے 31 مارچ 2013 تک 5رعایتی سلنڈر دیئے جائیں گے، جبکہ پرانے فیصلے کے تحت اس مدت میںصارفین کو صرف3سلنڈر ہی ملنے والے تھے۔ انہوں نے کہا کہ میٹنگ کے دوران اس بات کا بھی فیصلہ لیا گیا کہ ریاستی سرکاروں کو اس بات کا اختیار دیا جائے کہ وہ ڈیزل کی قیمتوں میں وقتاً فوقتاً اضافہ کرے تاکہ اضافی سبسڈی سے مرکزی خزانے کو ہونے والے نقصان کی بھرپائی کی جا سکے ۔ان کا کہنا تھا کہ میٹنگ کے دوران اگر چہ فائنانس منسٹری پینل کی طرف سے رسوئی گیس ، ڈیزل اور تیل خاکی کی قیمتوں میں اضافہ کرنے کی تجاویز زیر بحث آئیں تاہم پیٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافہ کرنے کا معاملہ التواء میں ڈال دیا گیا ہے ۔وزیر موصوف نے اس ضمن میں بتایا کہ کابینہ کمیٹی نے رسوئی گیس اور تیل خاکی کی قیمتوں میں اضافے کا فیصلہ التواء میں ڈال دیا ہے۔ ان کا کہنا تھا’’جہاں تک ڈیزل کا تعلق ہے ،تیل مارکیٹنگ کمپنی کو اس بات کا اختیار دیا گیا ہے کہ وہ وقتاً فوقتاً اس کی قیمتیں درست کر سکتے ہیں اور یہ عمل آج سے ہی شروع کیا جا سکتا ہے‘‘۔ انہوں نے کہا کہ رعایتی گیس سلنڈروں کی تعداد میں اضافے سے حکومت کی 93,00کروڑ روپے کی اضافی رقم سبسڈی پر خرچ ہو گی جبکہ ڈیزل کی سبسڈی کا بوجھ 9400کروڑ روپے ہو گئی ہے اور مجموعی طور پر تیل خاکی کو ملا کر ایندھن پر فراہم کی جانے والی سبسڈی رواں مالی سال کے دوران16000کروڑ روپے تک پہنچ جائے گی ۔یہاں یہ بات قابل ذکر ہے کہ اب صارفین کو اپریل سے ایک سال میں 9گیس سلنڈر رعایتی داموں یعنی 410.50روپے فی سلنڈر کے حساب سے دستیاب ہونگے جبکہ بغیر سبسڈی فی گیس سلنڈر کی قیمت 895.50روپے ہوگی۔ مرکزی وزارت پیٹرولیم کے سیکریٹری جی سی چتر ویدی نے بھی اس بات کی تصدیق کی کہ رسوئی گیس کی قیمتوں میں کوئی اضافہ نہیں کیا گیا ہے ۔تاہم انہوں نے بتایا کہ ڈیزل کی قیمتوں میں اضافے کا اختیار ریاستی حکومتوں کو دیا گیا ہے ۔انہوں نے یہ بات بھی صاف کی کہ ڈیزل کی قیمتوں میں فی لیٹر9.60روپے کا اضافہ بیک وقت نہیں کیا جائے گا بلکہ اس میں وقتاً فوقتاً معمولی اضافہ عمل میں لا یاجائے گا۔خیال رہے کہ گزشتہ سال رعایتی گیس سلنڈروں کی تعداد میں تخفیف کرنے کے فیصلے پر اپوزیشن نے مرکزی سرکار کو گھیرتے ہوئے اس فیصلے کے خلاف شدید رد عمل ظاہر کرتے ہوئے صدائے احتجاج بلند کی تھی جبکہ سبسڈی والے گیس سلنڈروں کی تعداد 6کرنے اور متعلقہ دستاویزات کی چھان بین کے دشوار گزار عمل کے خلاف ریاست جموں کشمیر میں بھی صارفین نے شدید غم و غصے کا اظہار کیا تھا جس پر ریاستی حکومت نے نائب وزیر اعلیٰ تارا چند کی سربراہی میں ایک اعلیٰ سطحی کمیٹی بھی تشکیل دی تھی جس نے اگر چہ کئی بار دلّی جا کر رعایتی گیس سلنڈروں کی تعداد 6سے9کرنے کا معاملہ وزیر اعظم اور دیگر سینئر لیڈران کے ساتھ اٹھایا تاہم اس معاملے پر کوئی پیش رفت نہ ہو سکی تھی۔اس سلسلے میں امور صارفین و عوامی تقسیم کاری کے نئے وزیر چودھری محمد رمضان سے رابطہ قائم کیا تو انہوں نے اس فیصلے پر اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ چونکہ ریاست جموں کشمیر کی جغرافیائی اور موسمی صورتحال بھارت کی دیگر ریاستوں کے بر عکس بالکل مختلف ہے اس لئے ان کی وزارت رعایتی گیس سلنڈروں میں مزید اضافہ کئے جانے کا معاملہ عنقریب مرکزی حکومت کے گوش گزار کرے گی ۔انہوں نے کہا ’’ہماری کوشش رہے گی کہ رعایتی گیس سلنڈروں کی تعداد9سے12تک کی جائے اور اس کیلئے لائحہ عمل مرتب کرنے کے بعد مرکز سے رجوع کیا جائے گا‘‘۔

 

یہ صفحہ ای میل کیجئے پرنٹ کریں












سابقہ شمارے
  DD     MM     YY    


 


© 2003-2014 KashmirUzma.net
طابع وناشر:رشید مخدومی  |  برائے جی کے کمیونی کیشنزپرائیوٹ لمیٹڈ  |  ایڈیٹر :فیاض احمد کلو
ایگزیکٹو ایڈیٹر:جاوید آذر  | مقام اشاعت : 6 پرتاپ پارک ریذیڈنسی روڑسرینگرکشمیر
RSS Feed

GK Communications Pvt. Ltd
Designed Developed and Maintaned By