GK Communications Pvt. Ltd
Edition :
  صفحہ اوّل
ملازمین کے احتجاجی مارچ پر پولیس یلغار ، لاٹھی چارج اور گرفتاریاں


سرینگر//جے سی سی کی جانب سے تین روزہ ہڑتال کال کے آخری روزہزاروں سرکاری ملازمین نے جمعرات کو سرینگر، جموں اور لداخ میں بیک وقت زوردار احتجاجی مظاہرے کئے جس دوران سرینگر میں پولیس نے ملازمینکے احتجاجی مارچ کوناکام بناتے ہوئے لاٹھی چارج کرکے ملازم قیادت سمیت 100سے زائد ملازمین گرفتارکئے ۔ملازم لیڈرشپ کی طرف سے آج یعنی 11جنوری کو سرینگر اور جموں میں بیک وقت پریس کانفرنس کے ذریعے آئندہ لائحہ عمل کااعلان کیاجائیگا ۔ تین روزہ ہڑتال کے آخری دن جمعرات صبح سے ہی ملازمین نے جے سی سی کال پر عمل کرتے ہوئے شیر کشمیر پارک پہنچنا شروع کیا ۔پارک اور اس کے گردونواح میں پولیس کی بھاری تعیناتی کے باوجود سینکڑوں ملازمین پارک تک پہنچنے میں کامیاب ہوگئے اور انہوں نے حکومت کیخلاف اور اپنے دیرینہ مطالبات کے حق میں زور دار نعرے بازی شروع کی ۔اس موقعہ پر کئی ملازم لیڈروں نے خطاب کیا۔ ملازمین کی مشترکہ مشاورتی کمیٹی کے سرکردہ لیڈر خورشید عالم نے اپنے خطاب میں سرکار کو ہدف تنقید بناتے ہوئے کہا کہ’’ سرکار ہماری جائز مانگوں کی طرف کوئی دھیان نہیں دے رہی ہے جس کی وجہ سے ہم ایک بار پھر سڑکوں پر آنے کیلئے مجبور ہوگئے ہیں‘‘۔ انہوں نے کہا کہ’’ حکومت کے ساتھ ملازم لیڈران کا جو معاہدہ ہوا تھا اُس پر نامعلوم وجوہات کی بناء پر عملدرآمد نہیں کیا جارہا ہے جس کے نتیجے میں ریاست کا ملازم طبقہ بری طرح متاثر ہورہا ہے‘‘۔ انہوں نے مزید کہا’’ ہم سے وقت مانگا گیا تھا مگر حکومت کی سرد مہری برقرار ہے جس کی وجہ سے ہم سڑکوں پر نکلنے کیلئے مجبور ہوگئے ہیں‘‘۔ملازمین سے تقریر کرتے ہوئے دیگر لیڈران نے ملازمین پر زور دیا کہ وہ آپسی اتحاد کو قائم رکھتے ہوئے جد وجہد میں مشغول رہیں۔ دوپہر 12بجے سینکڑوں ملازمین نے نعرے لگاتے ہوئے جلوس نکالا اورڈویژنل کمشنر آفس تک پیش قدمی کرنے لگے۔احتجاجی ملازمین چھٹے پے کمیشن کو انکے حق میں فوری طور لاگو کرنے کے حق میں نعرے بازی کررہے تھے جبکہ احتجاجی ملازمین نے اپنے ہاتھوں میں الگ الگ قسم کے بینراور پلے کارڈس اٹھارکھے تھے جن میں ان کی مانگوں کے حوالے سے نعرے درج تھے۔احتجاجی ملازمین ’’ہماری مانگیں پوری کرو،اتحادملازمین زندہ باد ،،محنت ہماری لوٹ تمہاری ‘‘کے نعرے لگاتے ہوئے جب ریگل چوک پہنچے تویہاں پہلے سے موجود پولیس کی بھاری جمعیت نے ان کا راستہ روک لیا اور انہیں آگے جانے کی اجازت نہیں دی۔اس موقعہ پر جلوس میں شامل ملازمین نے زوردار نعرے بازی کی اور کچھ دیر کے لئے دھرنا دیا جس کے نتیجے میں ریذیڈنسی روڑ پر گاڑیوں کی آمدورفت بھی رُک گئی۔ ملازمین نے اگرچہ کئی منٹوں تک مزاحمت کی اور مختلف اطراف سے ٹولیوں کی صورت میں نکل کر حکومت مخالف نعرے لگاتے رہے۔ جب پولیس نے صورتحال کو قابو سے باہر ہوتا محسوس کیا تو پولیس نے کئی اطراف سے ملازمین پر لاٹھی چارج کیاجس کے نتیجے میں ملازمین میں اتھل پتھل مچ گئی۔ملازمین اور پولیس کے درمیان کئی جگہوں پر ہاتھا پائی اورلاٹھی چارج کی وجہ سے ریگل چوک کے ملحقہ بازاروں میں راہگیروں میں افرا تفری پھیل گئی ۔اسی دوران پولیس نے لاٹھی چارج کے بیچ ملازمین کی گرفتاریاں عمل میں لائیں اور انہیں کوٹھی باغ پولیس تھانہ منتقل کیا۔ ملازمین کی ’’ مشترکہ مشاورتی کمیٹی‘‘ کے ایک سینئرلیڈر نے کشمیر عظمیٰ کو بتایا کہ جمعرات کے احتجاجی پروگرام کے دوران کل ملاکر100 سے زائدملازمین کو گرفتار کیا گیا جبکہ کئی ملازمین زخمی ہوگئے اور ملازمین کوڈویژنل کمشنر آفس تک پر امن طور پہنچنے کی اجازت نہیں دی گئی۔ گرفتار شدگان میں سینئرجے سی سی لیڈران محمد خورشید عالم ،فیاض اندرابی، منظور احمد پانپوری، فیاض شبنم ، منتظر محی الدین ،چودھری معراج الدین بجہ،تسلیمہ بشیر،فاروق احمد راجپوری ،زرینہ پروین ،عبدالسلام راجپوری ،بشیر احمد گاندربلی ،سید مذمل رضوی، محمد افضل ملک،زرینہ پروین،فاروق احمد راجپوری ،جان محمد،پرویز خان،عبدالقیوم بیگ،نذیر احمد چنگال،شبیر حسین ،محمد یونس متو،پیر منظور،مشتاق احمد خان اورجی ایم پنڈت وغیرہ شامل ہیں۔جے سی سی ترجمان فاروق احمد ترالی نے کشمیر عظمیٰ کو بتایا کہ جے سی سی کی میٹنگ جموں میں منعقد ہورہی ہے جس میں ملازمین کے مطالبات اور سرکار کی سرد مہری پر خور وخوض کیا جائیگا۔انہوں نے کہا کہ جے سی سی میٹنگ میں آئندہ لائحہ عمل مرتب کیا جائیگا۔ترجمان نے بتایا کہ آئندہ لائحہ کا اعلان سرینگر اور جموں میںجمعہ کو11بجے بیک وقت پریس کانفرنس کے ذریعے کیا جائیگا ۔انہوں نے کہاکہ جموں میں جے سی سی عبدالقیوم وانی اور محمد غفور ڈار جبکہ سرینگر میں محمد خورشید عالم پریس کا نفرنس میں جے سی سی کے پروگرام کا اعلان کریں گے۔ادھر جموں سے ملنے والی اطلاعات کے مطابق ملازمین نے جے کے پی سی سی کے ہیڈ آفس، شیپ ہسبنڈری دفتر اورایگریکلچر دفترسے جلوس نکالے اور پروگرام کے مطابق یہ ملازمین ادیوگ بھون جموں میں جمع ہوئے جہاں انہوں نے اپنے مطالبات کے حق میں احتجاجی دھرنا دیا۔مظاہرین ’’وعدہ خلافی نہیں چلے گی،ہم کیا چاہتے اپنا حق،اگریمنٹ کو لاگو کرو‘‘کے نعرے بلند کررہے تھے ۔اس موقعہ پر جے سی سی لیڈر عبدالقیوم وانی،محمد غفور ڈار،فاروق احمد ترالی ،گنیش کھجوریہ اور جسونت سنگھ نے خطاب کیا ۔جے سی سی لیڈارن نے سرکار پر وعدہ خلافی کا الزام عائد کرتے ہوئے کہا کہ ملازمین کے مطالبات کے حوالے سے سرکار نے ٹال مٹول کی پالیسی اختیار کی ہوئی ہے۔انہوں نے کہا کہ سرکار نے ملازمین کے ساتھ تحریری معاہدہ کیا ہے لیکن سرکار اسے عملانے میں عدم دلچسپی کا مظاہرہ کررہی ہے۔ انہوں نے کہا کہ ملازمین اپنے حق کا مطالبہ کررہے ہیں نہ تسلیم شدہ مطالبات پر ملازمین سیاست کررہے ہیں۔جے سی سی لیڈران نے سرکار کے رول کو مایوس کن قرار دیتے ہوئے کہا کہ سرکار ملازمین کو سڑکوں پر آنے کیلئے مجبور کررہی ہے۔انہوں نے دھمکی دی کہ اگر سرکار نے مزید تاخیر کئے بغیر ملازمین کے مطالبات کو پورا نہیں کیا تو وہ سخت پروگرام دینے سے گریز نہیں کریں گے۔اس کے بعد ملازمین لیڈر شپ کی قیادت میں ایک جلوس نکالا گیا جس نے ڈویژنل کمشنر جموں کے دفتر تک مارچ کیا جہاں انہوں نے کئی گھنٹوں تک دھرنا دیا ۔بعد ملازمین نے ڈویژنل کمشنر جموں ایک میمورنڈم پیش کیا۔

 

یہ صفحہ ای میل کیجئے پرنٹ کریں












سابقہ شمارے
  DD     MM     YY    


 


© 2003-2014 KashmirUzma.net
طابع وناشر:رشید مخدومی  |  برائے جی کے کمیونی کیشنزپرائیوٹ لمیٹڈ  |  ایڈیٹر :فیاض احمد کلو
ایگزیکٹو ایڈیٹر:جاوید آذر  | مقام اشاعت : 6 پرتاپ پارک ریذیڈنسی روڑسرینگرکشمیر
RSS Feed

GK Communications Pvt. Ltd
Designed Developed and Maintaned By