تازہ ترین

وادی میں نوجوانوں کا احتجاج جاری،پولیس اہلکار سمیت 25زخمی

      سرینگر+شوپیان//وادی میں بیشتر کالج اور ہائر اسکینڈری سکولوں میں تعلیمی سرگرمیاں معطل رہنے کے باوجود عصمت ریزی اور قتل کے خلاف وادی میں احتجاجی مظاہرے جاری ہیں۔اس دوران شوپیان میں بدترین تشدد بھڑک اٹھا جس کے دوران شلنگ اور پیلٹ سے18افراد زخمی ہوئے۔ دیگر علاقوں میں ایک پولیس اہلکار سمیت 6طلاب مضروب ہوئے۔ ادھر سرینگر میں خواتین کے مصرف ترین بازار گونی کھن میں دکانداروں اور تاجروں نے احتجاجی مارچ کیا۔ جنوبی کشمیر کھٹوعہ عصمت ریزی و قتل واقعہ کے خلاف ضلع شوپیان میںطلباء بڑے پیمانے پر سڑکوں پر نکل آئے ، جس کے دوران پر تشدد تصادم آرائیاں ہوئیں جس کے دوران شلنگ اور پیلٹ سے قریب 18افراد زخمی ہوئے جن میں کئی کو سرینگر منتقل کیا گیا ۔قصبہ میں بڑی تعداد میںطلاب نے پہلے احتجاجی مارچ کیا اوربعد میں بائز ہایراسکنڈری اسکول کے مین گیٹ پر جمع ہوئے اور نعرے بازی کی۔ اسکے بع

ملزمان جیل میں ہیں، احتجاج کیوں؟:نعیم اختر

 سرینگر// ریاستی حکومت کے ترجمان اور وزیرتعمیرات نعیم اختر نے کہا ہے کہ کھٹوعہ عصمت ریزی اور قتل کیس کو پہلے ہی حل کیا گیا ہے تو احتجاج کا اب مقصد کیا؟۔سماجی رابطہ گاہ ٹویٹر پر ٹویٹ کرتے ہوئے انہوں نے تحریرکھٹوعہ واقعہ پر احتجاج کرنے کا کوئی بھی مقصد نہیں ہے،کیونکہ کیس کو پہلے ہی حل کیا گیا ہے،اور ملزمان کو سلاخوں کے پیچھے دکھیلا گیا ہے‘‘۔ انہوں نے مزید کہا ’’احتجاج کس بات پر ہو رہا ہے؟،کیس کو حل کیا گیا،چارج شیٹ پیش کیا گیا،ملزمان حراست میں ہیں،سماعت ہو رہی ہے،جو لوگ غریب کھٹوعہ کی لڑکی کے نام پر ہنوز پتھرائو کر رہے ہیں،صرف ریاست کی شبیہ اور مفادات کو زک پہنچا رہے ہیں‘‘۔

بھارت کشمیر میں جنگی جرائم کا مرتکب

 سرینگر//مشترکہ مزاحمتی قیادت سید علی گیلانی،میر واعظ عمر فاروق اور محمد یٰسین ملک نے ریاست میں بھارتی افواج اور انتظامیہ کے ہاتھوں وسیع پیمانے پر شہری آبادی کے خلاف قتل وغارت، جنسی زیادتیوں اور زیرِ حراست قیدیوں پر جسمانی تشدد ڈھائے جانے والے بدترین قسم کے جنگی جرائم کی تحقیقات اقوامِ متحدہ کے جنگی ٹربیونل کے ذریعے کرانے کا مطالبہ کیا ہے۔مزاحمتی قیادت نے ریاستی ہیومن رائٹس کمیشن کے سامنے جیل خانہ جات کے ڈائریکٹر جنرل کے بیان پر اظہار افسوس کرتے ہوئے کہا کہ مزاحمتی قیادت کو اسیرانِ زندان کی حالت زار کے حوالے سے جو مصدقہ اطلاعات پہنچی ہیں انکے مطابق ریاست اور ریاست سے باہر بھارت کے جیل خانوں میں ایامِ اسیری گزارنے والے بے بس قیدیوں پر جسمانی تشدد ڈھانے، ان سے بیگار لینے، ان کے ساتھ ذلت آمیز سلوک کرنے، انہیں جانوروں کی طرح ہاتھوں اور پاؤں پر چلنے کے لئے مجبور کرنے، جیلوں کے اندر

بھاجپا وزرا ء کیلئے مشاورت

 سرینگر//ریاستی کابینہ میں شامل بی جے پی کے سبھی11وزراء کی طرف سے استعفے پیش کئے جانے اور ان میں سے 2وزراء کے استعفے گورنر این این ووہرا اور وزیراعلیٰ محبوبہ مفتی کی طرف سے منظور کئے جانے کے بعدکابینہ میں 22اپریل کے بعدکسی بھی وقت  پھیربدل ممکن ہے۔تاہم 22اپریل کورام مادھو کے دورۂ جموں پر پارٹی لیجسلیٹرمیٹنگ میں نئے ناموں کوحتمی شکل دی جائے گی۔ معلوم ہوا ہے کہ وزیراعلیٰ محبوبہ مفتی کی قیادت والی وزارتی کونسل میں 22اپریل کے بعد کسی بھی وقت وسیع پیمانے پر ردوبدل کیا جاسکتا ہے اور خاص بی جے پی کی طرف سے کئی نئے چہروں کو موقعہ اور کئی پرانے چہروں کو آرام دیا جاسکتاہے۔  

پیلٹ لگنے سے طالب علم کی آنکھ کی پتلی کو نقصان

     سرینگر //کٹھوعہ واقعہ کے خلاف احتجاج کرنے والے نوجوانوں کو احتجاج کی قیمت آنکھوں کی بینائی سے چکانی پڑرہی ہے اورپچھلے دو روز میں 5نوجوان آنکھوں میں چھرے لگنے کی وجہ سے زخمی ہوئے ، جبکہ ایک نوجوان کی آنکھ کی پتلی کو نقصان پہنچا ہے۔ جن  6نوجوانوں کو  صدر اسپتال میں منتقل کیا گیا جن میں ایک نوجوان شل لگنے کی وجہ سے زخمی ہوا جبکہ 5نوجوانوں کے آنکھوں میں پیلٹ لگے ہیں۔ چھروں کی وجہ سے نہ صرف طالب علم زخمی ہوئے ہیں بلکہ دوعام نوجوان بھی شامل ہیں۔ پچھلے دو دنوں میں آنکھوں پر چھرے لگنے سے زخمی ہونے والے نوجوانوں میں  22سالہ عمر احمد شاہ ساکن شوپیاں، 18سالہ طالب علم شاہد احمد، جنید احمد ،21سالہ اشفاق احمد ساکن پلوامہ کے نام  قابل ذکر ہیں۔ڈگری کالج پلوامہ کے طالب علم شاہد احمد ساکن چاڈورہ کی دائیں آنکھ میں پیلٹ لگا ہے‘‘ ۔ 9ویں جماعت کے طال

سوچنا ہوگا ہم کہاں جارہے ہیں؟

جموں//وزیر اعلیٰ نے کھٹوعہ میں پیش آنے والے شر مناک واقعہ پر افسوس جتاتے ہو ئے کہا کہ ایک اچھے اور با شعور سماج میں ایسے واقعات کا رونماء ہو نا شر مناک ہے ۔انہوں نے کہا کہ ایک اچھے اور با شعور سماج میں کمسن اور معصوم کے ساتھ کوئی ایسی گھنائونی حرکت کیسے کر سکتا ہے جو خود دیوی ماں کا مظہر ہو ۔ محبوبہ مفتی نے صدر مملکت رام ناتھ کوند کے ہمراہ شری ماتا ویشنو دیوی یو نیورسٹی جموں میں چھٹے کنوو کیشن سے خطاب کر تے ہو ئے کہا کہ ایک با شعور اور اچھے سماج میں ایسے واقعات کی قطعی اجازت نہیں دی جاسکتی  اور ایسے واقعات کا رونماء ہو نا اس بات کی عکاسی کر تا ہے کہ سماج کہیں نہ کہیں غلط راستے کی جانب جارہا ہے ۔انہوں نے کہا کہ سماج کے ساتھ کچھ غلط ہو رہا ہے اور ہمیں اس بارے میں سو چنا چاہئے کہ ہم کہاں جارہے ہیں ۔ انہوں نے طلاب سے کہا کہ وہ اپنے اندر نئی چیزیں جاننے اور اختراعیت کے جذبے کو فروغ دی

گورنرووہرا نے صدرجمہوریہ کو ریاستی معاملات سے آگاہ کیا

 جموں// گورنر این این ووہرا نے ریاست سے متعلق تمام ضروری معاملات کے بارے میں صدر جمہوریہ رام ناتھ کووند کو مطلع کیا۔ گورنر نے صدر جمہوریہ کو بیرونی سیکورٹی صورتحال ، اندرونی سیکورٹی ماحول ، سماجی و اقتصادی ترقی سے متعلق سکیموں اور پروگراموں کی صورتحال ، انتظامی نظام کی کارکردگی ، رشوت ستانی کے بڑھتے ہوئے وارِدات ، سوشل میڈیا کے اثرات اور سکولی تعلیم و طبی سیکٹروں کو درپیش چیلنجوں کے بارے میں تفصیلات سے آگاہ کیا۔گورنر نے راشٹر پتی کو ریاست میں اعلیٰ تعلیم اور یونیورسٹیوں کی کارکردگی سے متعلق معاملات کے بارے میں بھی جانکاری دی۔  

۔ 2017 میں شہری اموات کی شرح میں166فیصد اور جنگجو ہلاکتوں کی شرح میں42فیصد کا اضافہ

 نئی دہلی //مرکزی وزارت داخلہ نے اپنی سالانہ رپورٹ میں1990سے لیکر 31دسمبر2017تک ریاست جموں وکشمیر میں شہری اور فورسز ہلاکتوں کی تعداد 19,099(انیس ہزار ننانوے) ظاہر کی ہے، جن میں 13ہزار976عام شہری اور 5ہزار 123فورسز اہلکار شامل ہیں۔رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ سال 2016 کے مقابلے میں 2017کے دوران وادی میں شہری اموات کی شرح میں166فیصد جبکہ جنگجو ہلاکتوں کی شرح میں42فیصد اضافہ درج کیا گیا۔ سالانہ رپورٹ برائے2017-18بدھ کے روز جاری کی گئی، جس میں کہا گیا ہے کہ جموں وکشمیر میں نامساعدحالات کے آغازیعنی 1990سے لیکر 31 دسمبر 2017تک تشدد آمیز واقعات میں کل 13 ہزار 976شہری ازجاں ہوئے جبکہ اس طویل عرصہ کے دوران 5ہزار 123 سیکورٹی اہلکار بھی اپنی جانیںگنوا بیٹھے۔ رپورٹ میں 2016 اور2017کا موازنہ کرتے ہوئے کہا گیا ہے کہ سال 2016کے مقابلے میں سال2017کے دوران وادی میںپیش آئے تشدد آمیز واقعات میں شہ

۔36گھنٹوں تک آپریشن سیر جاگیر سے فورسز خالی ہاتھ لوٹ آئی

 ترال//ترال کے سیر جاگیر علاقے میں 36 گھنٹوں کے بعد فوج نے آپریشن ختم کیا۔منگل کی شام جنگجوئوں44آر آر کی گشتی پارتٰ پر حملہ کیا جس میں ایک اہلکار شدید طور پر زخمی ہوا تھا۔حملے کے فوراً بعدفوج نے علاقے کو محاصرے میں لیا اور رات بھرمحاصرہ اور تلاشی کارروائی کا سلسلہ جاریرکھا،جو بدھ کو اختتام پذیر ہوا تاہم علاقے سے کسی کی گرفتاری کی کوئی اطلاع موصول نہیں ہوئی ہے ۔    

کھٹوعہ واقعہ: کھنہ بل سے کھادن یار تک طلاب سراپا احتجاج

 سرینگر+پلوامہ+اننت ناگ//کھٹوعہ عصمت ریزی و قتل کیس میں مجرموں کو سزائے موت دینے کی آوازیں وادی کے طول و ارض میں سنائی دینے لگی ہیں۔منگل کو وادی کے شمال جنوب میں کالج اور سکول طلاب بڑے پیمانے پر سڑکوں پر نکل آئے ، جس کے دوران پر تشدد تصادم آرائیاں ہوئیں جس کے دوران شلنگ اور پیلٹ سے قریب 35طلبا زخمی ہوئے جن میں کئی سرینگر منتقل کئے گئے۔طلاب،وکلاء،اور تاجروں نے اوڑی سے اسلام آباد(اننت ناگ) تک یکجہتی کے طور پر آوازیں بلند کیں اور واقعہ میں ملوث مجرموں کو سزائے موت دینے کا مطالبہ کیا۔ وسطی کشمیر  لالچوک میں قانون کے طلاب نے احتجاجی مظاہرہ کیا،جس کے دوران انہوں نے گھنٹہ گھر تک مارچ کیا۔ مختلف کالجوں میں زیر تعلیم قانون کے طلاب پرتاپ پارک میں جمع ہوئے اور انسانی زنجیر بنا کر احتجاج کیا۔اس موقعہ پر انہوں نے لائرس کلب کی طرف سے شروع کی گئی دستخطی مہم میں بھی شرکت کی۔بعد

۔20طلباء پیلٹ لگنے سے شدید مضروب

 سرینگر //وادی کے مختلف اضلاع میںبدھ کو طلبہ و طالبات پر فورسز اہلکاروں کی طرف سے ٹیر گیس شلنگ اور پیلٹ گن کے استعمال سے زخمی ہونے والے 20طالب علموں میں سے 4کو صدر اسپتال منتقل کیا گیا جن میں تین کی آنکھیں پیلٹ لگنے کی وجہ سے متاثر ہوئی ہیں۔  زخمی طالب علموں میں دو کی دائیں آنکھ جبکہ ایک کی بائیں آنکھ پر پیلٹ لگے ہیں تاہم تینوں زخمیوں کی آنکھوں میں ابتدائی جراحی عمل میں لائی گئی ہے۔ میڈیکل سپر انٹنڈنٹ صدر اسپتال سرینگر ڈاکٹر سلیم ٹاک نے کشمیر عظمیٰ کوبتایا  ’’بدھ کو چار زخمی نوجوانوں کو صدر اسپتال سرینگر میں داخل کیا گیا جن میں 3کی آنکھوں میں زخم لگے تھے‘‘۔ انہوں نے کہ ایک نوجوان کی چھاتی ، ناک اور ٹانگوں میں پیلٹ لگے تھے تاہم چار وں زخمی نوجوانوں کی حالت مستحکم ہے۔   

۔20طلباء پیلٹ لگنے سے شدید مضروب

 سرینگر //وادی کے مختلف اضلاع میںبدھ کو طلبہ و طالبات پر فورسز اہلکاروں کی طرف سے ٹیر گیس شلنگ اور پیلٹ گن کے استعمال سے زخمی ہونے والے 20طالب علموں میں سے 4کو صدر اسپتال منتقل کیا گیا جن میں تین کی آنکھیں پیلٹ لگنے کی وجہ سے متاثر ہوئی ہیں۔  زخمی طالب علموں میں دو کی دائیں آنکھ جبکہ ایک کی بائیں آنکھ پر پیلٹ لگے ہیں تاہم تینوں زخمیوں کی آنکھوں میں ابتدائی جراحی عمل میں لائی گئی ہے۔ میڈیکل سپر انٹنڈنٹ صدر اسپتال سرینگر ڈاکٹر سلیم ٹاک نے کشمیر عظمیٰ کوبتایا  ’’بدھ کو چار زخمی نوجوانوں کو صدر اسپتال سرینگر میں داخل کیا گیا جن میں 3کی آنکھوں میں زخم لگے تھے‘‘۔ انہوں نے کہ ایک نوجوان کی چھاتی ، ناک اور ٹانگوں میں پیلٹ لگے تھے تاہم چار وں زخمی نوجوانوں کی حالت مستحکم ہے۔   

عصمت دری کیخلاف قانون سازی کی ضرورت

 جموں // نیشنل کانفرنس صدر و رکن پارلیمان ڈاکٹر فاروق عبداللہ نے کہا ہے کہ کٹھوعہ میں آٹھ سالہ کمسن بچی کی وحشیانہ عصمت دری اور قتل واقعہ کے ملزمان کو پھانسی دی جائے۔ انہوں نے کہا کہ کٹھوعہ جیسے واقعات کے مرتکب ملزمان کو پھانسی پر چڑھانے والے قانون کی اشد ضرورت ہے۔ فاروق عبداللہ نے ضلع کٹھوعہ کے لکھن پور میں ایک پارٹی تقریب کے حاشئے پر نامہ نگاروں کو بتایا کہ سی بی آئی انکوائری کا مطالبہ کرنے والوں کو عدالتی نظام پر بھروسہ کرنا چاہیے۔ انہوں نے کہا ’کٹھوعہ کیس عدالت کے اندر ہے۔ اگر عدالت کو محسوس ہوگا کہ اس میں کمی ہے اور سی بی آئی انکوائری کی ضرورت ہے تو عدالت حکم دے سکتی ہے۔ سی بی آئی انکوائری کرانا نہ میرے ہاتھ میں ہے اور نہ ان لوگوں کے ہاتھ میں جو ایجی ٹیشن کررہے ہیں‘۔ فاروق عبداللہ نے ایجی ٹیشن کرنے والوں سے عدالتی نظام پر بھروسہ کرنے کی گذارش کرتے ہوئے کہا &rs

مثبت ا قدام کا جواب مثبت دیا جائیگا:گیلانی

 سرینگر // حریت (گ) چیئرمین سید علی گیلانی نے بھارت کے وزیر اعظم نریندر مودی کے برطانیہ آمد پر وہاں مقیم جموں کشمیر سے تعلق رکھنے والے لوگوں کی طرف سے ایک احتجاجی مظاہرے کا اہتمام کرنے کے دوران اجتماع سے ٹیلیفونک خطاب میں برطانوی پارلیمنٹ کے ذمہ دار لوگوں کے ذریعے بھارتی وزیر اعظم تک کشمیری عوام کی طرف سے یہ پیغام پہنچانے کی تلقین کرتے ہوئے کہا کہ بھارت نے اپنی افواج کے ہاتھوں ایک مظلوم، بے بس اور نہتی قوم پر ظلم وبربریت اور قتل وغارت گری کا بازار گرم کر رکھا ہے۔ یہاں انسانی حقوق کو سلب کرکے ان کا جنازہ نکال رہا ہے۔گیلانی نے یہ بھی دہرایا کہ جموں کشمیر کے لوگ بھارت کا کوئی جائز حصہ چھیننا نہیں چاہتے ہیں، البتہ اپنی سرزمین کو بھارت کے ناجائز اور جبری قبضے سے چھڑانے کیلئے ایک پُرامن تحریک کے ذریعے اپنا مطالبہ بلند کررہے ہیں۔حریت رہنما نے کہا کہ جموں کشمیر میں ردّعمل کے طور پر ہمارے

شاہراہ 5گھنٹے تک بند

  بانہال // بارشوں کی وجہ سے جموں سرینگر شاہراہ پر  پیڑاکے مقام پر بھاری پسیاں اور پتھر گر آنے کی وجہ سے شاہراہ پر گاڑیوں کی آمدورفت بدھ کی صبح 5گھنٹے تک بند رہی۔سہ پہر چار بجے کے قریب درماندہ ٹریفک کیلئے  شاہراہ کویکطرفہ طور بحال کیا گیا۔پیڑا کے مقام پر ایک پہاڑی سے بھاری چٹانیں اور پتھر شاہراہ پر گر آئے جس کی وجہ سے گاڑیوں کی آمدورفت کئی گھنٹوں تک ٹھپ ہو گئی۔ پیڑا اور رام سو کے درمیان کئی کلومیٹرتک ٹریفک جام ہوگیا اور ٹریفک جام میں پھنسی درماندہ گاڑیوں کو  ایک ایک کرکے نکالا گیا۔  

نرمل سنگھ کو صنعت و حرفت اور جنگلات محکموں کا اضافی چارج

 جموں//وزیرا علیٰ محبوبہ مفتی نے صنعت و حرفت اور جنگلات و ماحولیات محکموں کا چارج نائب وزیر اعلیٰ ڈاکٹر نرمل سنگھ کو سونپا ہے ۔اس سلسلے میں جاری ایک حکمنامے کے مطابق آئین کے تحت حاصل اختیارات کا استعمال کرتے ہوئے وزیر اعلیٰ نے ان وزارتوں کے قلمدان نائب وزیراعلیٰ کو تفویض کئے ہیں۔ نائب وزیر اعلیٰ فی الوقت بجلی ، مکانات اور شہری ترقی محکموں کے وزیر بھی ہیں۔ان محکموں کے قلمدان چندر پرکاش گنگا اور چودھری لال سنگھ کے استعفیٰ کے بعد نائب وزیر اعلیٰ کو تفویض کئے گئے۔  

وادی کے شمال جنوب میں طلاب سڑکوں پر

 سرینگر// کھٹوعہ واقعہ کے خلاف طلاب اور تاجروں کا احتجاج جاری ہے۔ احتجاج کے دوران سرینگر،اسلام آباد (اننت ناگ)، سوپور، بارہمولہ، گاندربل اور بانڈی پورہ اور کپوارہ میں پتھرائو اور شلنگ ہوئی۔طلاب نے احتجاجی ریلیاں،جلسے اور جلوس نکال کر مجرموں کو سزائے موت دینے کا مطالبہ کیا۔ شہر کے قلب میں واقع ایس پی اسکول کے طلاب نے منگل کو احتجاجی جلوس برآمد کرتے ہوئے نعرہ بازی کی۔احتجاجی مظاہرین نے ہاتھوں میں پلے کارڑ اور بینر اٹھا رکھے تھے۔ کشمیر یونیورسٹی میں بھی احتجاجی مظاہروں کا سلسلہ جاری رہا۔منگل کو مختلف شعبہ جات کے طلاب اپنے کلاسوں سے باہر آئے اور یونیورسٹی احاطے کے اندر احتجاج کیا۔ سرینگر میں ٹریڈ ایسو سی ایشن بازار کمیٹی نے مائسمہ سے پریس کالونی تک مارچ کیا ۔ احتجاجی تاجر مصروف ریذیڈنسی روڑ پر نمودار ہوئے،اور نعرہ بازی کی۔احتجاجی مظا ہرین لال سنگھ ہائے ہائے،معصوم بچی کو انصا ف دو،

ڈوڈہ، ادہم پور اور اوڑی میں سٹرک حادثات

 ڈوڈہ +کپوارہ+اوڑی//ڈوڈہ، ادہم پور اور اوڑی میں ٹریفک حادثات کے دوران 3افراد لقمہ اجل جبکہ پچاس کے قریب زخمی ہوئے۔ منگل کی صبح سرحدی ضلع ڈودہ میں بٹوٹ کشتواڑ شاہراہ پر ایک المناک سڑک حادثے میں موٹر سائیکل پر سوار 2جواں سال طالب علم جاں بحق ہوگئے۔ پولیس نے بتایا کہ 2طالب علم محمد احسان ولد عبدالطیف عمر 19سال اور محمد عرفان ولد مشتاق احمد عمر 18سال ساکنان بشرن گندوہ ڈوڈہ موٹرسائیکل پر سوار ہوکر ڈوڈہ سے گندوہ کی طرف جارہے تھے کہ اس دوران قریب 10بجکر15پر جونہی موٹرسائیکل قصبہ ڈوڈہ سے 20کلومیٹر بٹوٹ کشتواڑ شاہراہ پر پریم نگر کے قریب پہنچ گیا تو مخالف سمت سے آرہے ایک ٹیمپو نے اسے زور دار ٹکر ماردی۔ ٹکر اس قدر شدید تھی کہ موٹرسائیکل کئی پلٹیاں کھانے کے بعد دورجاگرا اور اس پر مذکورہ بالادونوں طالب علم شدید زخمی ہوگئے۔ تاہم دونوں زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے دم توڑ بیٹھے۔ادھرکپوارہ کاشہری ٹک

جہلم کی سطح آب میں ابھی بھی12فٹ کی کمی

 سرینگر // وادی میں اپریل کے مہینے میں ہونے والی بارشوں کے پانی سے آبی ذخائر میں کوئی خاص بہتری نہیں آئی ہے اور پچھلے سال کے مقابلے میں اس سال دریائے جہلم میںا بھی بھی 12فٹ پانی کی کمی ہے۔ محکمہ موسمیات کے ڈپٹی ڈائریکٹر مختار احمد کے مطابق اپریل کے مہینے میں شہر سرینگر میں 60ملی میٹر اور گلمرگ میں 120ملی میٹر بارش ہوئی اور اگلے تین روز تک وادی میں بارشوں کا سلسلہ وقفے وقفے سے جاری رہے گا  ۔انہوں نے کہا کہ شہر میں اپریل کے مہینے میں 90ملی میٹر بارش ہونی چاہئے تھی اور اگراس ماہ میں 21اپریل تک بارشیں ہوئیں تو یہ ٹارگٹ کسی حد تک مکمل ہو سکتا ہے ۔انہوں نے کہا کہ وادی میں اگلے تین روز یعنی 21تک موسمی صورتحال یوں ہی تون ہی رہے گئی اور اس وقت کے دوران ہلکی سے درمیانہ درجے کی بارشیں بھی ہو سکتی ہیں ۔انہوں نے کہا کہ 21کے بعد وادی میں موسمی صورتحال میں بہتری آئے گی ۔ناظم زراعت نے تاز

خالی اے ٹی ایم نقدی سے بھر گئے

 سرینگر//ملک بھر کی بیشتر ریاستوں میں نقدی کی زبردست قلت اور اے ٹی ایمز میں رقومات نہ ہونے کی صورتحال کے دوران جے کے بنک نے جموں ریجنل آفس ریزرو بنک آف انڈیا کی بروقت معاونت سے کشمیر وادی میں نقدی کی وافر سپلائی بحال کی ہے ۔نقدی کی قلت کے باعث اے ٹی ایم نیٹ ورک میں خلل واقعہ ہونے کی رپورٹس پر فوری کارروائی کرتے ہوئے ،جے کے بنک نے ریزرو بنک آف انڈیا سے درخواست کی کہ وادی میں لوگوں کو نقدی کی قلت کے حوالے سے درپیش مشکلات کا ازالہ کیا جائے ۔وادی میں جے کے بنک کے اہتمام سے چلائے جارہے کرنسی چیسٹ میں نقدی کی سپلائی بحال ہونے پر اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے جے کے بنک چیئرمین و سی ای او پرویز احمد نے کہا’’میں آر بی آئی جموں کا مشکور ہوں جو انہوں نے مشکل وقت میں ہمیں معاونت کی ۔ان کی بروقت کاروائی جو انہوں نے نقدی کی سپلائی بحالی کے حوالے سے کی ،باعث اطمینان ہے ۔ہم ان کی مس