تازہ ترین

ایل او سی سے متعلق پروپیگنڈا

 راولپنڈی//پاکستانی آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ کا کہنا ہے کہ بھارت ایل او سی پر شرپسندوں کی موجودگی کا پروپیگنڈا کررہا ہے لیکن وہ اپنے مذموم مقاصد میں کامیاب نہیں ہوگا۔پاک فوج کے شعبہ تعلقات عامہ (آئی ایس پی آر) کے مطابق آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجواہ نے کنٹرول لائن پر کیل سیکٹر اور شاردا میں اگلے مورچوں کا دورہ کیا جہاں میجر جنرل اظہر عباس نے ایل او سی کی صورتحال اور سیز فائر کی بھارتی خلاف ورزیوں پر بھی بریفنگ دی۔آئی ایس پی آر کے مطابق آرمی چیف نے پاک فوج کی آپریشنل تیاریوں اور سیز فائرکی خلاف ورزیوں کامؤثر جواب دینے پر جوانوں کی تعریف کی۔ جنرل قمر باجوہ نے بھارت کو مؤثر جواب دینے اور پاک فوج کی پیشہ وارانہ تیاروں کو سراہتے ہوئے کہا کہ بھارت ایل او سی پر شرپسندوں کی موجودگی کا پروپیگنڈا کررہا ہے لیکن وہ اپنے مذموم مقاصد میں کامیاب نہیں ہوگا جب کہ پاک فوج کنٹرول لائن

اساتذہ کی مردم شماری اور چنائو میں ڈیوٹیاں ختم،SSAکے تحت اُجرتیں واگزار کرنے کا فیصلہ

جموں//سکولی تعلیم کو واپس پٹری پر لانے کے لئے تازہ اقدامات کا تذکرہ کرتے ہوئے وزیر تعلیم سید محمد الطاف بخاری نے کہا ہے کہ سرکار نے اساتذہ کو تمام غیر تدریسی سرگرمیوں بشمول انتخابات اور مردم شماری سے مستثنیٰ رکھاہے البتہ تعلیمی کلینڈرمیں زیادہ سے زیادہ بہتری محکمہ کے ذمہ ہے ۔انہوں نے کہا کہ جامع تبادلہ خیال اور تجزئیے کے بعد اساتذہ کو تدریسی عمل میں بہتری اور توجہ کے لئے آزاد ماحول فراہم کرنے کا فیصلہ کیا گیا اور انہیں اپنی ذمہ داریوں کو بخوبی نبھانا چاہئے ۔ وزیر نے ان باتوں کا خلاصہ یہاں ایک پریس کانفرنس میں کیا ۔ وزیر نے کہا کہ اس قدم سے اساتذہ کو طلباء کو تعلیم فراہم کرنے میں کافی مددملے گی اور گذشتہ سال کے جیسے حالات اور واقعات کے نتیجے میں ضائع وقت کے زیاں کی بھی بھرپائی کی جاسکے گی ۔وزیر نے کہا کہ اساتذہ کو انتخابات ، مردم شماری اور دیگر سرگرمیوں سے مستثنیٰ رکھا جائے گا اور کشمی

نماز جمعہ کے بعد الیکشن مخالف احتجاج

سرینگر //سری نگرسمیت کئی علاقوں میں جمعہ کو بعد از نماز الیکشن مخالف مظاہرے ہوئے اور کئی مقامات پر پتھرائو اور شلنگ ہوئی۔مشترکہ مزاحمتی قیادت کی جانب سے نماز جمعہ کے بعد 9اور12اپریل کو سرینگر اور اسلام آباد پارلیمانی نشستوں کیلئے ہونے والے ضمنی انتخابات کے خلاف مظاہروں کی اپیل کے پیش نظر نما ز جمعہ کے بعد تاریخی جامع مسجد ، آبی گزر ، سوپور ، صورہ ، بڈگام میں کچھ مقامات پر الیکشن مخالف احتجاجی مظاہرے کئے گئے۔ جامع مسجدسرینگر سے ایک احتجاجی جلوس برآمد ہوا جس میں شامل لوگوں نے مجوزہ ضمنی پارلیمانی انتخابات اور گرفتاریوں کے خلاف نیز آزادی کے حق میں نعرے بلند کئے۔ یہ جلوس پر امن طور اختتام پذیر ہوا ۔علاقہ صورہ میں ا س وقت بازار بند ہوگیا اورگاڑیوں کی آمدورفت متاثر ہوئی جب نماز جمعہ کے بعد یہاں مشتعل نوجوانوں اور پولیس وفورسز کے درمیان ٹکرائو کی صورتحال پیدا ہوئی۔ نوجوانوں کی سنگباری کے

تپ دق کا عالمی دن

سرینگر // دنیا بھر میں تپ دق (ٹی بی) کا عالمی دن منایاگیا جو ویسے تو آسانی سے قابل علاج ہے مگر پھر بھی اس کے نتیجے میں روزانہ ساڑھے چار ہزار افراد ہلاک ہوجاتے ہیں۔کچھ عرصہ قبل عالمی ادارہ صحت کی ایک رپورٹ میں یہ بات سامنے آئی تھی کہ یہ مرض روزانہ دنیا بھر میں 4400 افراد کی ہلاکت کا باعث بنتا ہے اور صرف 2015 میں ہی اس کے نتیجے میں 18 لاکھ افراد ہلاک ہوئے۔تپ دق یا سل عرف عام میں جسے ٹی بی (Tuberculosis)  کہا جاتا ہے، کا  شمار دس مہلک ترین امراض میں ہوتا ہے۔ ٹی بی کے متاثرین اور اس مرض سے ہونے والی ہلاکتوں کی تعداد اس سے کہیں زیادہ ہوسکتی ہے کہ ترقی پذیر ممالک میں اس مرض کے تمام کیسز رپورٹ نہیں ہوتے۔پوری دنیا میں جہاں تپ دق کے 1.8ملین مریضوں میں سب سے زیادہ 21فیصد مریض بھارت کی مختلف ریاستوں سے تعلق رکھتے ہیں وہیں دوسری جانب وادی میں پچھلے تین سال کے دوران کل 28,684افراد تپ دق

مودی کا دورہ، شاہراہ پر نگرانی تیز

 جموں// وزیر اعظم نریندر مودی کے دورہ جموں وکشمیر کے پیش نظر سری نگر جموں شاہراہ پر تلاشی کاروائیاں تیز کردی گئی ہیں۔ وزیر اعظم 2 اپریل کو ریاست کا دورہ کرکے ادھم پور میں بنائی گئی ایشیاء کی سب سے بڑی روڑ ٹنل کو قوم کے نام وقف کریں گے۔ پولیس  نے بتایا ’کشمیر شاہراہ بالخصوص ضلع ادھم پور میں سیکورٹی بڑھانے کے علاوہ تلاشی کاروائیاں تیز کردی گئی ہیں‘۔ انہوں نے بتایا کہ جاری تلاشی کاروائیوں کے دوراں جمعرات کو چنانی کے نزدیک چار مشتبہ افراد کو حراست میں لے لیا گیا۔ تاہم سینئر سپرنٹنڈنٹ آف پولیس ادھم پورہ ایس کے مشرا نے بتایا ’حراست میں لئے گئے مشتبہ افراد کو پوچھ گچھ کے بعد صبح رہا کردیا گیا‘۔ انہوں نے بتایا کہ پوچھ گچھ کے دوران گرفتار شدہ افراد کے قبضے سے کوئی بھی مشکوک چیز برآمد نہیں ہوئی۔ وزیر اعظم مودی 2 اپریل کو چنینی ناشری ٹنل کو قوم کے نام وقف کرنے

گئو کشی پر موت کی سزا ،بل راجیہ سبھا میں پیش

نئی دہلی//راجیہ سبھا میںکل گئو کشی پر موت کی سزا کا قانون والا 'گئو تحفظ بل 2017' اور پارلیمنٹ کے کام کاج کی مدت کم از کم 100 دن کا انتظام کرنے والا 'پارلیمنٹ (پروڈکٹیویٹی انہینسمینٹ ) بل 2017 'سمیت چھ غیر سرکاری بل پیش کئے گئے ۔ بھارتیہ جنتا پارٹی کے سبرامنیم سوامی نے ایوان میں گئو تحفظ بل 2017 پیش کیا۔ اس بل میں گائے کی نسل کو مستحکم کرنے ، گئو کشی پر پابندی لگانے کے لئے آئین کے آرٹیکل 37 اور 48 پر عمل کرنے کے لئے ایک اتھارٹی کا قیام اور گئو کشی پر موت کی سزا کا انتظام کیا گیا ہے ۔ شرومنی اکالی دل کے نریش گجرال نے 'پارلیمنٹ (پیداوری میں اضافہ) بل 2017 پیش کیا۔ اس کی حمایت ڈپٹی چیئرمین پی جے کورین نے بھی کی اور کہا کہ پارلیمنٹ میں کام کاج ہونا چاہئے اور اس میں رکاوٹ کو دور کیاجانا چاہئے ۔ بل میں پارلیمنٹ کے موجودہ تین سیشنوں کے علاوہ ایک اضافی سیشن کا اہتمام کیا گی

مسئلہ کشمیریوں کی خواہشات کے مطابق حل ہو:باسط

 نئی دلی// پاکستانی ہائی کمشنر عبدالباسط کا کہنا ہے کہ آزادی کی تحریکوں کووقتی طورپردبایا تو جاسکتا ہے لیکن دائمی طور پر ختم نہیں کیاجاسکتا اس لیے ہمیں یقین ہے کہ کشمیری عوام کی جدوجہد ضرور کامیاب ہوگی۔یوم پاکستان  کے موقع پر بھارت میں پاکستانی ہائی کمیشن میں پرچم کشائی کی تقریب ہوئی جس میں پاکستانی ہائی کمشنر عبدالباسط نے بھارت میں موجود تمام پاکستانیوں کومبارکباد دیتے ہوئے کہا کہ قائداعظم کی ولولہ انگیزقیادت میں برصغیرکے مسلمانوں نے آزادی کے خواب کی تعبیر پائی۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان کو صحیح معنوں میں فلاحی مملکت بنانیکی ذمہ داری ہم سب پرعائد ہوتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ امن پاکستان اوربھارت دونوں کے مفاد میں ہے اور معنی خیزمذاکرات سے ہی دیرپا امن یقینی بنایا جاسکتا ہیجب کہ بھارت سے مذاکرات کی خواہش کمزوری نہیں بلکہ ہماری طاقت ہے۔عبدالباسط نے کہا کہ پاکستان جموں کشمیر سمیت ت

پاکستانی زیر انتظام کشمیر اور گلگت کو خالی کیا جائے:بھارت

نئی دہلی //بھارت نے کہا ہے کہ بھارت اور پاکستان کے درمیان جموں و کشمیر کے حوالے سے ایک ہی معاملہ ہے اور وہ ہے پاکستان زیر انتظام کشمیر اور گلگت بلتستان پر جبری قبضہ ہے ۔مرکزی وزیر مملکت جتیندر سنگھ نے پاکستان کے بیانات پر رد عمل ظاہر کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان کو یہ علاقے خالی کرنے چاہئیں۔عبدالباسط کے بیان پر شدید رد عمل ظاہر کرتے ہوئے مرکزی وزیر نے کہا کہ اگر دونوں ملکوں کے درمیان کوئی ایشو ہے تو وہ پاکستان کا ان علاقوں پر قبضہ ہے جو کہ ناجائز ہے۔انکا کہنا تھا کہ ان علاقوں کو کیسے قبضہ سے آزاد کر کے بھارت میں شامل کیا جائے بنیادی ایشو یہی ہے۔انہوں نے کہا کہ1994میں پارلیمنٹ میں اس حوالے سے قرارداد بھی پاس کی گئی اور بھارت کا اس ضمن میں دوٹوک موقف ہے۔  

مسئلہ کشمیر حکومت تنہا نہیں سلجھا سکتی

گاندربل// نیشنل کانفرنس صدر ڈاکٹر فاروق عبداللہ نے مرکزی وزیر داخلہ راجناتھ سنگھ کے کشمیر سے متعلق بیان پر ردعمل ظاہر کرتے ہوئے کہا ہے کہ مسئلہ کشمیر کو حکومت تنہا سلجھا نہیں سکتی بلکہ اس کے لئے تمام سیاسی جماعتوں اور عوام کا بھی تعاون ہونا لازمی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ حریت قیادت کو خانہ و تھانہ نظر بند رکھنے سے مسئلہ کشمیر حل نہیں ہوسکتا بلکہ اس سے پیچیدگیوں میں اور بھی اضافہ ہو تا جائے گا۔ انہوں نے کہا کہ حریت قیادت حسب معمول ہر سال یوم پاکستان پر دہلی سفارت خانہ جاتے تھے لیکن موجودہ پی ڈی پی حکومت نے اپنے آقائوں کے احکامات پر عمل پیرا ہوکر تمام علیحدگی پسندوں کا کریک ڈائون کرکے اُن کے یوم پاکستان پر نئی دلی میں منعقد ہونے والی تقریب شریک ہونے پر روک لگادی۔ فاروق عبداللہ جمعرات کو گاندربل میں ایک انتخابی جلسے سے خطاب کر رہے تھے ۔انہوں نے کہا ’کشمیریوں نے کبھی بھی غلامی پسند نہیں

ضمنی انتخابات کا شاخسانہ، دھڑا دھڑپولیس کارروائیاں

پلوامہ +سرینگر//ضمنی انتخابات سے قبل وادی میں بڑے پیمانے پر گرفتاریوں کا سلسلہ شروع کردیا گیا ہے اور ابھی تک جنوبی کشمیر اور سرینگر میں120نوجوانوں کی گرفتاری عمل میں لائی جاچکی ہے۔پچھلے تین روز کے دوران سرینگر پارلیمانی حلقہ میں بھی گرفتاریوں کا چکر شروع کردیا گیا ہے۔بدھ کی رات ایسی ہی چھاپہ مار کارروائیوں کے دوران آری ہل پلوامہ اور آنچار صورہ میں مزید14 نوجوانوں کی گرفتاری کے بعدہڑتال اور احتجاج کے دوران مظاہرین اور پولیس کے درمیان پر تشدد جھڑپیں ہوئیں۔پولیس نے جنوبی کشمیر کے اننت ناگ، کولگام، شوپیان اور پلوامہ اضلاع میںقریب80نوجوانوں کو گرفتار کیا ہے۔شوپیان میں13نوجوانوں کی گرفتاری عمل میں لائی جاچکی ہے جو پولیس کی نظر میں انتخابات کے دوران رخنہ ڈالنے کی کاروائیاں کرسکتے تھے۔پلوامہ میں چند روز قبل مورن میں23افراد کی گرفتاری عمل میں لائی گئی۔دلچسپ بات یہ ہے کہ ان میں کچھ ایسے افراد

شوپیان میں پولیس پر حملہ،جنگجو فرار

شوپیان //جنگجوئوں نے شوپیان کے حرمین علاقے میں پولیس کی ایک گاڑی پر گھات لگاکر حملہ کیا تاہم کسی قسم کا کوئی جانی نقصان نہیں ہوا۔حملے کے بعد جنگجوئوں کی تلاش میں آس پاس کے علاقوں کو کئی گھنٹوں تک محاصرے میں رکھا گیا ۔ ضلع کے حرمین علاقے میں جمعرات کی صبح  قریب 9بجکر 20منٹ پر ڈی ایس پی ہیڈکوارٹر شوپیان اپنے اسکارٹ کے ہمراہ ایک رکھشک گاڑی زیر نمبرJK02D/5327میں شوپیان سے حرمین کی طرف جارہے تھے کہ حاجی پورہ کمبدلن کے نزدیک پہنچتے ہی  ایک میوہ باغ میںگھات میں بیٹھے جنگجوئوں نے گاڑی کو نشانہ بناتے ہوئے شدید فائرنگ کی۔گولیوں کی زد میں آکر گاڑی کے ٹائر پھٹ گئے اور گاڑی سڑک کے بیچوں بیچ رُک گئی۔اسی دوران گاڑی میں سوار اہلکاروں نے بھی جوابی کارروائی عمل میں لائی اور طرفین کے درمیان گولیوں کا تبادلہ قریب5منٹ تک جاری رہا۔اسی دوران جنگجو جائے واردات سے فرار ہونے میں کامیاب ہوگئے۔ حملے ک

کٹوتی شیڈول ابھی بھی برقرار

 سرینگر// محکمہ بجلی نے دسمبر کے مہینے میں کٹوتی شیڈول کا علان کرتے ہوئے کہا تھا کہ ندی نالوں اور دریائوں میں پانی کی سطح بڑھ جانے کے بعد لوگوں کو کٹوتی شیڈول سے نجات دلاکر انہیں بلاخلل بجلی فراہم کی جائے گی ۔سرما میں بجلی کی مار جھیل رہے وادی کے صارفین کیلئے ابھی بھی وہی کٹوتی شیڈول رکھا گیا ہے اور اس میں کوئی راحت نہ دینے کا پورا بندوبست کیا گیا ہے۔چیف انجینئر کا کہنا ہے کہ شیڈول کو تبدیل کیا گیا ہے اور اب صرف چار گھنٹے بجلی کی کٹوتی کی جاتی ہے۔ معلوم رہے کہ سردیوں کے موسم میں محکمہ بجلی پانی کی مقدار میں کمی کا بہانہ بناکرسخت ترین کٹوتی شیڈول مرتب کرتا ہے، جس کے تحت گائوںدیہات ،قصبہ جات اور شہر میں بجلی کی سخت ترین کٹوتی کی جاتی ہے۔ اس سال بھی سرما میں کٹوتی شیڈول مرتب کیا گیا جو بدستور جاری ہے اور اس سلسلے میں محکمہ بجلی کی عدم توجہی عوام کیلئے درد سر بن گئی ہے۔وادی بھر میں کئ

یاسین ملک کا طبی معائنہ

سرینگر // لبریشن فرنٹ چیئرمین محمد یاسین ملک کو کل سینٹرل جیل سے خیبر ہسپتال لایا گیا جہاں ان کے کئی ٹیسٹ کرائے گئے۔ملک پچھلے کچھ ایام سے وائرل انفکشن کے شکار ہیں اوربخار نیز سر درد میں مبتلا ہیں۔ طبی تشخیص کے فوراً بعد انہیں واپس سینٹرل جیل منتقل کردیا گیا ہے۔اسپتال لانے کے موقعہ پر میڈیا سے بات کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ کشمیر کو ایک پولیس اسٹیٹ بنادیا گیا ہے جہاں ہر سانس اور ہر بات پر پہرے عائد کئے گئے ہیں۔فرنٹ چیئرمین نے کہا کہ غنڈہ راج قائم کرکے امن و امان اور جمہوریت کی باتیں کی جارہی ہیں جو مضحکہ خیز ہیں۔ انہوں نے کہا کہ آج الیکشن کے نام پر بچوں اور بزرگوں جنہیں دیکھ کر رونا آتا ہے کو جیلوں ،تھانوں اور انٹروگیشن سینٹروں میں پہنچایا جارہا ہے۔ کوئی بھی بائیکاٹ کی بات کرے تو اسے فوراً پابند سلاسل کیا جاتا ہے۔ پولیس اسکول طلباء کو گرفتار کرنے کیلئے ان کے کلاس رُوموں پر بھی چڑھائی ک

ضمنی پارلیمانی انتخابات، انتخابی بساط پر مہرے سج گئے

اننت ناگ// سرینگر کے بعد پارلیمانی نشست اننت ناگ میں بھی انتخابی بساط سج گئی ہے۔بدھ کوپی ڈی پی کی طرف سے نامزد امیدوار تصدق مفتی اوراین سی کانگریس کے مشترکہ امیدوارغلام احمد میرنے ریٹائرننگ افسر کے دفتر میں کاغذات نامزدگی داخل کئے۔اننت ناگ پارلیمانی حلقے میں12اپریل کو ضمنی انتخابات ہونگے۔ضلع ترقیاتی کمشنر کے دفتر کے باہر پی ڈی پی کارکنوں اور حامیوں کی ایک بڑی تعداد جمع تھی جو پی ڈی پی اور تصدق مفتی کے حق میں نعرہ بازی کر رہے تھے۔ اس موقعہ پر تصدق مفتی کے ہمراہ پارٹی کے سنیئر لیڈر مظفر حسین بیگ، محمد سرتاج مدنی، دیہی ترقی کے وزیر عبدالرحمان ویری، اوقاف کے وزیر فاروق اندرابی، راجیہ سبھا کے ممبر نذیر احمد لاوے،ڈاکٹر محبوب بیگ،، قانون ساریہ کے ممبرعبدالرحیم راتھر، اعجاز احمد میر،یاسر ریشی کے علاوہ محمد رفیع میر اور سجاد مفتی بھی موجود تھے۔ کانگریس امیدوار اور ریاستی صدر غلام احمد میر نے بھ

شکوک و شبہات الیکشن کمیشن نے دور کردئے

جموں//الیکشن کمیشن آف انڈیا کے سیکرٹری مالے ملک نے چیف الیکٹورل افسر شانت منو اورسرینگر و اننت ناگ پارلیمانی حلقوںکیلئے نامز د ریٹریننگ افسروں کے ساتھ ایک ویڈیو کانفرنس کے ذریعے ان حلقوں کے ضمنی انتخابات کے سلسلے میں کئے جارہے انتظامات کا جائزہ لینے کے علاوہ انتخابی عمل سے جڑے چند شکوک و شبہات دور کئے۔چیف الیکٹورل آفیسر شانت منو نے جانکاری دیتے ہوئے کہا کہ یہ دو پارلیمانی حلقے 7 اضلاع پر مشتمل ہیں ۔انہوںنے کہا کہ سرینگر پارلیمانی حلقے کے لئے کاغذات نامزدگی داخل کرنے کی آخری تاریخ 21؍ مارچ 2017ء کو مقرر کی گئی تھی جبکہ 22 ؍ مارچ کو کاغذات کی جانچ پڑتال کی گئی۔ انہوںنے کہا کہ اس حلقے کے لئے کل 11امید واروں نے کاغذات نامزدگی داخل کئے تھے جن میں سے 9کے کاغذات درست پائے گئے اور 2امید واروں کے کاغذات رد کئے گئے۔شانت منو نے مزید کہا کہ اننت ناگ پارلیمانی حلقے کے لئے کاغذات داخل کرنے کی آخ

چنائو آزادانہ ہوئے تو مخالفین کی ضمانتیں ضبط ہونگی:عمر

اننت ناگ //پارلیمانی انتخابات میں حکمران جماعت کی ضمانتوں کو ضبط کرنے کا دعویٰ کرتے ہوئے سابق وزیر اعلیٰ عمر عبداللہ نے کہا کہ اگر منصفانہ انتخابات عمل میں لائے گئے تو پی ڈی پی کا نام و نشان نظر نہیں آئیگا ۔ غلام احمد میر کی طرف سے حلقہ انتخاب اننت ناگ میں نامزدگی کے کاغذات داخل کرنے کے بعد ڈاک بنگلہ کھنہ بل میں تقریر کے دوران عمر عبداللہ نے کہا کہ پی ڈی پی نے عوامی سطح پر اس بات کا اقرار کیا ہے کہ انہوں نے بی جے پی کے ساتھ انتخابات میں ہاتھ ملایا۔ عمر عبداللہ نے نیشنل کانفرنس اور کانگریس کارکنوں سے مخاطب ہوکر کہا ـ ’پی ڈی پی نے اگر بائیکاٹ کو نافذ نہیں کیا اور نہ ہی سرکاری مشینری کا استعمال کیا یا انتظامیہ و پولیس سے اعانت حاصل نہیں کی تو ہمیں اس بات کی قوی امید ہے کہ سرینگر اور اننت ناگ حلقہ انتخابات سے ہمارے امیدوار پی ڈی پی امیدواروں کی ضمانتیں ضبط کریں گے ‘۔ انہوں نے

لوگوں کی اُمیدوں کو پورا کرنا حقیقی چیلنج:تصدق

اننت ناگ //پی ڈی پی امیدوار تصدق مفتی نے کاغزات نامزدگی داخل کرنے کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ وہ الیکشن میں مقابلہ آرائی کیلئے تیار ہیں تاہم انکے لئے انتخابات کے بعد حقیقی چیلنج سامنے ہوگا۔تصدق مفتی نے کہا’’ میرے لئے لوگوں کے احساسات اور امیدوں کو پورا کرنا حقیقی چیلنج ہوگا اور یہ کام انتخابی عمل کے پورا ہونے کے بعد ہی شروع ہوگا‘‘۔اُن کا کہنا تھا کہ انتخابی دوڑ میں شامل ہونے سے کہیں زیادہ میرے لئے یہ بات اصل چیلنج ہے کہ انتخابات کاعمل مکمل ہونے کے بعد میں اپنے عوام کے توقعات کو کیسے پورا کر پاتا ہوں۔ انہوں نے کہا کہ میں اپنے والد مرحوم مفتی محمد سعید کی طرح اپنے عوام کی خواہشات کی تکمیل اور امیدوں پر کھرا اُترنا چاہتا ہوں اور یہی میرے لئے سب سے بڑا چیلنج ہے۔ مفتی تصدق کا مزید کہنا تھا کہ ریاست اور ریاستی عوام کے مفادات کا تحفظ انکی اولین ترجیح ہوگی ک

سرینگر میں 9 کے کاغذاتِ درست ،2رد

سرینگر//سرینگر حلقہ کے پارلیمانی ضمنی انتخابات کے لئے کاغذاتِ نامزدگی کی کل جانچ پڑتال کی گئی جس کے دوران 9امید واروں کے کاغذاتِ نامزدگی درست پائے گئے۔نیشنل کانفرنس کے امید وار ڈاکٹر فاروق عبداللہ ،  پیپلز ڈیموکریٹک پارٹی کے امید وار نذیر احمد خان، جے اینڈ کے لیبر ل ڈیموکریٹک پارٹی کے امید وار بکرم سنگھ ، اکھل بھارت ہند و مہا سبھا کے چیتن شرما اور راشٹریہ سماج وادی پارٹی (سکیولر) کے سجاد ریشی کے کاغذات نامزدگی درست پائے گئے ۔اس کے علاوہ جن آزا د امید واروں کے کاغذات نامزدگی درست پائے گئے اُن میں مرزا سجاد حسین بیگ، غلام حسن ڈار،فاروق احمد ڈار اور معراج خورشید ملک شامل ہیں۔دو آزا د امید واروں ریاض احمد بٹانہ اور غلام محی الدین وانی کے کاغذات نامزدگی ریپزنٹیشن آف پیپل ایکٹ 1951 کی رو سے درست نہیں پائے گئے اور ان کو رد کیا گیا۔ یہ بات قابل ذکر ہے کہ نامزدگیاں واپس لینے کی آخری تا

یوم پاکستان کی تقریب

سرینگر// مزاحمتی خیمے کے خلاف دائرہ تنگ کرتے ہوئے پہلی مرتبہ انہیں نئی دلی میں یوم پاکستان کے حوالے سے منعقدہ تقریب میں شمولیت کرنے سے روک دیا گیا ہے۔ دہلی میں مقیم پاکستانی ہائی کمشنر عبدالباسط نے حسب روایت23مارچ کو یوم پاکستان کی مناسبت سے  سفارتخانے میں منعقد ہونے والی تقریب کے حوالے سے حریت لیڈروں اور دیگر مزاحمتی جماعتوں،بشری حقوق کارکناں،صحافیوں اور کاروباری لیڈروں کو مدعو کیا ہے۔انتظامیہ نے پہلی مرتبہ مزاحمتی خیمے کو دہلی میں منعقد ہونے والی اس میٹنگ میں شمولیت کرنے کی اجازت نہیں دی۔حریت کانفرنس کے دونوں دھڑوں کے لیڈران سید علی گیلانی اور میر واعظ عمر فاروق کو خانہ نظر بند رکھا گیا ہے جبکہ شبیر احمد شاہ،محمد اشرف صحرائی، ایاز اکبر،پیر سیف اللہ ، شاہد الاسلام ،ظفر اکبر بٹ سمیت دیگر کئی لیڈر بھی خانہ نظر بند ہیں۔ کئی روز قبل ہی لبریشن فرنٹ چیئرمین محمد یاسین ملک کو گرفتار کر

ریاست میں فورسز کی خودکشی کے گراف میں اضافہ

نئی دہلی// وادی میں فورسز کی خود کشی کرنے کے گراف میں اضافہ ہورہا ہے۔مرکزی سرکار نے کہا ہے کہ گزشتہ3برسوں کے دوران ریاست میں37فورسز اہلکاروں نے اپنی زندگی کا خاتمہ کیا۔ خود کشی کرنے کے واقعات سے متعلق اعدادو شمار ظاہر کرتے ہوئے مرکزی سرکار نے کہا ہے تقریباً ایک فرد کے حساب سے اس مدت میں ہر ماہ کے دوران ایک فورسز اہلکار نے خود کشی کی۔ راجیہ سبھا میں مرکزی وزیر مملکت برائے امور داخلہ کرن رجیجو نے کہا کہ ان خودکشیوں کے وجوہات عمومی ہیں جن میں ازوجی اختلافات،ذاتی عناد،نفسیاتی بیماریاں،ذہنی دبائو اور کام کرنے سے متعلق مسائل ہیں۔انہوں نے گزشتہ3برسوں کے اعدادو شمار کو سال در سال ظاہر کرتے ہوئے کہا کہ حکومت نے فورسز کے کام کرنے سے متعلق حالات کو بہتر بنانے کیلئے کئی ایک اقدامات اٹھائے ہیں،جن میں بہتر طبی سہولیات بھی شامل ہیں۔ کرن رجیجو نے مزید بتایا کہ فورسز اہلکاروں کے ماہرین کے ساتھ بھی بات