تازہ ترین

نوحہ ٔ دل

تہذیب و تربیت پہ ثقافت پہ نوحہ لکھ لہجہ،زبان، علم و فراست پہ نوحہ لکھ چھینا گیا ہے سر سے ترے آسماں ترا چھینی گئی زمینِ، وراثت پہ نوحہ لکھ دشمن کو اپنے مفت میں تلوار بیچ دی اجداد سے ملی تھی حفاظت پہ نوحہ لکھ ہر فردِ کارواں ہے بھٹکتا سراب میں چہرہ بدلتی روزقیادت پہ نوحہ لکھ بارش، ہوا پہ اَبر پہ دریا پہ ریت پر خوشبو، گلاب، دھوپ، زراعت پہ نوحہ لکھ سیرت میںڈارون کی اُچھل کود آگئی صورت میں آدمی کی متانت پہ نوحہ لکھ کچلے گئے جو راہ میں جگنو بنے پھرے بجھتے چراغ شہرِ عداوت پہ نوحہ لکھ آئینِ، علم وصدق و مساوات وآگہی جمہور کے فریبِ سیاست پہ نوحہ لکھ چُھپتی ہےروز بنتِ حوا اشتہار میں عریان سرخیوں کی صحافت پہ نوحہ لکھ دائم کیا ہے فرض یزیدوںنے کربلا ماتم کناں ہوں روز شہادت پہ نوحہ لکھ ہر سُواُچھالتا ہے تکلّم اُداسیاں

تازہ ترین