غزلیات

اے جانِ وفادِل کو لُبھانے کے لئے آ آجائو ذرا درد مٹانے کے لئے آ   اُجڑا ہے میرے دل کا چمن تند ہوا سے اِک بار میرے گھر کو بسانے کے لئے آ   ویران پڑا ہے میرا کا شانۂ غربت اُلفت کے اِس مندر کو سجانے کے لئے آ   ہم تم میں رہے دوری گوارا نہیں لیکن حائل ہیں جو پردے وہ ہٹانے کے لئے آ   معصوم ؔسخنور کو وفاوئوں کا صلہ دے آئوئو ۔۔۔ تو سَدا ساتھ نبھانے کے لئے آ   مشتاق احمد معصومؔ حسینی کالونی، چھترگام، بڈگام موبائل نمبر؛06005510692     بے شک گردشِ شام وسحردو دِل کے ساتھ کُشادہ نظردو جس میں گزرے عمر ہماری رہنے کی خاطروہ گھردو اس دنیاسے تنگ بہت ہوں  میں اُڑ جائوں ایسے پَردو کہاں ہوں میں، معلوم ہواِتنا مجھ کومیری کوئی خبردو میرے لئے احسان یہ

تازہ ترین