انگلینڈ میں پاکستان کا ریکارڈ غیرمعمولی ہے:گنگولی

ممبئی؍سابق بھارتی کپتان سارو گنگولی نے انگلینڈ میں ریکارڈ اور آئی سی سی ٹورنامنٹ میں کارکردگی کو دیکھتے ہوئے پاکستان کو فیورٹ ٹیموں میں ایک ٹیم قرار دیا ہے۔بھارتی اخبار کے مطابق سارو گنگولی کا کہنا ہے کہ عالمی ٹورنامنٹس اور انگلینڈ میں پاکستان ٹیم کا ریکارڈ غیرمعمولی ہے، دوسال قبل انہوں نے چیمپئنز ٹرافی جیتی، انگلینڈ میں 2009ء میں ورلڈ ٹی 20 ٹورنامنٹ جیتا۔حالیہ سیریز کے دوران انگلینڈ کے خلاف دوسرے ون ڈے میں پاکستان کی کارکردگی کی مثال دیتے ہوئے گنگولی نے کہا کہ پاکستان نے انگلینڈ میں ہمیشہ اچھا کھیلا ہے، وہ صرف 12رنز سے پیچھے رہ گئے نہیں تو انہوں نے 374رنز کا پہاڑ جیسا ہدف تقریباً حاصل کرلیا تھا۔انہوں نے کہا کہ پاکستان نے اپنی عمدہ بولنگ کی وجہ سے انگلینڈ کو اْس کی سرزمین پر ٹیسٹ میچز میں بھی شکست دی ہے۔گنگولی کا کہنا ہے کہ ویرات کوہلی اور اْن کی ٹیم کواس خطرے سے بہت زیادہ پریشان ہونے

سنچری کی خوشی ہے لیکن ٹیم جیت جاتی تو کافی اچھا ہوتا: امام الحق

لندن؍انگلینڈ میں 150 رنز کی اننگز کھیلنے والے کم عمر ترین بلے باز کا اعزاز پانے والے امام الحق کا کہنا ہے کہ اگر ٹیم جیت جاتی کافی اچھا ہوتا اور اس اننگز سے اعتماد میں مزید اضافہ ہواہے۔امام الحق کا کہنا تھا کہ بطور اوپنرٹیم کوچ اور کپتان نے جومیرا کردار طے کیا ہے اس میں وکٹ پر قیام کرنے کے ساتھ اسکور بورڈ کو بھی متحرک رکھنا ہے، ساتھی اوپنر فخر زمان چوں کہ زیادہ جارحانہ انداز سے کھیلتے ہیں تو اس صورت حال میں میری ذمہ داری ہوتی ہے کہ ایک اینڈ سنبھالے رکھوں اور انہیں زیادہ کھیلنے کا موقع فراہم کروں، کوشش کرتا ہوں کہ پورے اوورز تک وکٹ پر موجود رہوں، ابتدائی دو وکٹ جلد گرجانے کے بعد بس یہ ہی سوچا تھا کہ  50 اوورز تک کھڑے ہوناہے۔اوپننگ بلے باز نے کہا کہ ایک روزہ کرکٹ میں لمبا اسکور بنانے کے لیے پہلے تین بلے بازوں میں سے کسی ایک کا آخر تک وکٹ پر ٹھہرنا بہت اہم سمجھاجاتا ہے، انگلینڈ کے ل

سنچری کی خوشی ہے لیکن ٹیم جیت جاتی تو کافی اچھا ہوتا: امام الحق

لندن؍انگلینڈ میں 150 رنز کی اننگز کھیلنے والے کم عمر ترین بلے باز کا اعزاز پانے والے امام الحق کا کہنا ہے کہ اگر ٹیم جیت جاتی کافی اچھا ہوتا اور اس اننگز سے اعتماد میں مزید اضافہ ہواہے۔امام الحق کا کہنا تھا کہ بطور اوپنرٹیم کوچ اور کپتان نے جومیرا کردار طے کیا ہے اس میں وکٹ پر قیام کرنے کے ساتھ اسکور بورڈ کو بھی متحرک رکھنا ہے، ساتھی اوپنر فخر زمان چوں کہ زیادہ جارحانہ انداز سے کھیلتے ہیں تو اس صورت حال میں میری ذمہ داری ہوتی ہے کہ ایک اینڈ سنبھالے رکھوں اور انہیں زیادہ کھیلنے کا موقع فراہم کروں، کوشش کرتا ہوں کہ پورے اوورز تک وکٹ پر موجود رہوں، ابتدائی دو وکٹ جلد گرجانے کے بعد بس یہ ہی سوچا تھا کہ  50 اوورز تک کھڑے ہوناہے۔اوپننگ بلے باز نے کہا کہ ایک روزہ کرکٹ میں لمبا اسکور بنانے کے لیے پہلے تین بلے بازوں میں سے کسی ایک کا آخر تک وکٹ پر ٹھہرنا بہت اہم سمجھاجاتا ہے، انگلینڈ کے ل

تازہ ترین