تازہ ترین

درماندہ لوگوں کی مدد 24گھنٹے کام کرنے والی ہیلپ لائن قائم

نئی دلّی//نئی دلّی اور ملک کے مختلف حصوں میں جموں وکشمیر سے تعلق رکھنے والے درماندہ لوگوں کے مشکلات کو لاک ڈاون مدت کے دوران کم کرنے کے لئے جموں وکشمیر ریذیڈنٹ کمیشن کی طرف سے چوبیس گھنٹے کام کرنے والا مخصوص ہیلپ لائن سینٹر چالو کیاگیا ہے۔ایڈیشنل سیکرٹری ریمپی اوہری اِس مرکز کے کام کا ج کی مجموعی نگرانی کر رہے ہیں ۔اِس مقصد کے لئے پانچ ہیلپ لائین نمبرات بھی قائم کئے گئے ہیں۔ایک سرکاری ترجمان نے کہا کہ جموں وکشمیر کے درماندہ لوگ لاک ڈاون کی وجہ سے پیدا شدہ کسی بھی مسئلے کے ازالے کے لئے چوبیس گھنٹے کام کرنے والے ہیلپ لائین نمبرات پر رابطہ قائم کرسکتے ہیں۔یہ نمبرات ہیں۔919717355186( ایم ) ، 919810314773( ایم ) ،24611210، 24611108اور24615475 ہیں۔یہ لوگ jkhsdelhi@gmail.com پر بھی رابطہ قائم کرسکتے ہیں۔سرکاری ترجمان نے کہا ہے کہ ملک بھر میں کافی تعداد میں طلباء کی کمیشن نے مدد کی ہے تاکہ وہ

وزیراعظم کا چین سے لوٹے کشمیری طالب علم کو فون

سرینگر//ووہان چین سے واپس لوٹے کشمیری طالب علم کے ساتھ وزیر اعظم نریندر مودی نے فون پر بات کرکے وہاں کے حالات کے بارے میں جانکاری حاصل کی ۔ کوروناوائرس کے مرکز ووہان چین میں زیر تعلیم کشمیری طالب علم نظام الرحمان جو وہاں یونیورسٹی میں زیر تعلیم تھا، کے ساتھ گذشتہ روز وزیر اعظم نریندر مودی نے فون پر بات کی ۔نظام  الرحمان کشمیر سے تعلق رکھتا ہے اور وُوہان میں MBBSکی ڈگری کررہا تھا تاہم کوروناوائرس کی وجہ سے پھیلی افراتفری کے بعد مرکزی سرکار کی جانب سے اُسے دیگر ساتھیوں سمیت واپس لایا گیا ۔ مذکورہ طالب علم سے وزیر اعظم نریندر مود ی نے فون پر بات کی اور اُ س سے ووہان کے بارے میں جانکاری حاصل کی ۔ اس موقعہ پر فون پر بات کرتے ہوئے  نظام الرحمان نے کہا کہ ہمیں کورنٹائن میں بہتر سہولیات فراہم کی گئیں۔انہوںنے وزیر اعظم اور مرکزی سرکار کا بھی شکریہ اداکیا جنہوں نے انہیں واپس لانے کیلئے

وزیراعظم کا آیوش ڈاکٹروں کی مدد لینے پر زور

نئی دہلی//وزیراعظم نریندر مودی نے سماج کو صحت مند رکھنے کے لئے آیوش ڈاکٹروں کی تعریف کرتے ہوئے سنیچر کو کہا کہ لوگوں کو کرونا وائرس سے بچاؤ سے متعلق بیداری پیدا کرنے کے لئے سوشل میڈیا کا استعمال کیا جانا چاہئے ۔ مودی نے ویڈیو کانفرنسنگ کے ذریعہ آیوش ڈاکٹروں کے ساتھ بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ قوم کو صحت مند رکھنے میں آیوش کی طویل روایت رہی ہے ۔کرونا وائرس سے متعلق اس کی اہمیت اور بڑھ جاتی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ آیوش ڈاکٹروں کا نظام پورے ملک میں پھیلا ہوا ہے اور انہیں عالمی صحت تنظیم کی ہدایات کا پالن کرتے ہوئے کروناوائرس سے نمٹنے میں اپنے نظام کااستعمال کرنا چاہئے ۔ اس موقع پر مرکزی وزیر آیوش شری پد یسونائک اور کابینہ سکریٹری اور آیوش وزارت کے سکریٹری بھی موجود تھے ۔انہوں نے کہا کہ ملک کو کرونا وائرس سے نمٹنے میں صحت کے شعبہ کے مکمل ورک فورس کا استعمال کرنا چاہئے ۔ حکومت کو ضرورت پڑھن

ریاستیں مزدوروں اور محنت کشوں کی مدد کریں :وزارت داخلہ

نئی دہلی// مرکزی وزارت داخلہ نے ریاستی حکومتوں اور مرکز کے زیر انتظام علاقوں سے جان لیوا کورونا وائرس کی وجہ سے ملک بھر میں نافذ لاک ڈاؤن کے دوران دوسری ریاستوں کے مزدوروں، محنت کشوں اور دیگر مہاجرین کی ہر ممکن مدد کرنے کے لئے کہا ہے ۔مرکزی داخلہ سکریٹری اجے کمار بھلا نے سبھی ریاستوں اور مرکز کے زیر انتظام علاقوں کو خط لکھ کر کہا ہے کہ وہ لاک ڈاؤن کے دوران دوسری ریاستوں کے ان لوگوں کو کھانے اور رہنے کی جگہ مہیا کرانے کے اقدامات کریں۔ خط کے ذریعے بھیجے گئے مشورے میں ریاستوں سے یہ بھی کہا گیا ہے کہ وہ دوسری ریاستوں کے طلباء اور کام کرنے والی خواتین کو ان کی موجودہ رہائش گاہوں میں ہی رہنے سے متعلق اقدام بھی اٹھائیں۔ انہوں نے ریاستوں سے یہ بھی یقینی بنانے کے لئے کہا ہے کہ ہوٹلوں، کرایہ کے مکانوں اور ہوسٹلوں میں رہنے والے لوگوں کو وہیں رکھتے ہوئے سبھی لازمی اشیا فراہم کی جانی چاہئے ۔ اس سے

طبی ساز و سامان کی فراہمی

اسلام آباد//پاکستان نے جمعہ کو چین کے ساتھ لگنے والی سرحد وںکو ایک دن کیلئے کھول دیا تاکہ ملک میں کروناوائرس کی عالمی وبا ء کا مقابلہ کرنے کیلئے چینی طبی امدادکووصول کیا جائے۔پاکستان میں اس وقت اس وبائی بیماری میں1235افراد مبتلاء ہیں جبکہ نو کی موت ہوچکی ہے ۔چین نے جمعرات کو پاکستان سے کہا تھا کہ وہ دونوں ملکوں کے درمیان سرحدوں کو جمعہ کے روزایک دن کیلئے کھول دے،تاکہ ملک میں کرونا وائرس کی عالمی وباء سے نمٹنے کیلئے طبی سامان کو لایا جائے ۔پاکستان کی وزارت صحت کے مطابق ملک میں مصدقہ کروناوائرس کے بیماروں کی تعداد1235ہوگئی ہے جب کہ اس بیماری کاشکار9افراد کی موت بھی ہوچکی ہے۔سندھ میں اس بیماری میں 429افراد مبتلاء ہیں۔پاکستان کے سب سے بڑے صوبے پنجاب میں اس بیماری کے408مریض ہیں ،جبکہ خیبرپختون خواہ میں147،بلوچستان میں131،گلگت بلتستان میں91،اسلام آبادمیں27اور پاکستانی زیرانتظام کشمیرمیں2مر

کررونا وائرس کا قہر

 نئی دہلی//ملک میں کورونا وائرس ‘ کووڈ -19’ سے اب تک 19افراد کی موت ہو چکی ہے جبکہ متاثرہ مریضوں کی تعداد بڑھ کر 824 ہو گئی ہے ۔ وزارتِ صحت کی رپورٹ کے مطابق کورونا وائرس کا قہر ملک کے 27 ریاستوں اور مرکز کے زیرِ انتظام علاقوں میں پھیل چکا ہے اور اس کے 824 معاملات کی تصدیق ہو چکی ہے۔ کورونا وائرس کے انفیکشن سے ملک بھر میں اب تک 19 افراد کی موت ہوئی ہے جبکہ 67 افراد صحتیاب ہو چکے ہیں ۔کیرل، مہاراشٹر، کرناٹک، تلنگانہ، گجرات، راجستھان، اترپردیش اور دہلی میں اب تک سب سے زیادہ معاملے سامنے آئے ہیں ۔ کورونا وائرس کی وبا سے مہاراشٹر میں چار، گجرات میں تین، کرناٹک میں دو، دہلی، بہار، پنجاب، ہماچل پردیش، جموں کشمیر، تامل ناڈو، مدھیہ پردیش اور مغربی بنگال میں ایک ایک شخص کی موت ہو چکی ہے ۔اترپردیش میں جمعہ کو نوئیڈا میں تین اورآگرہ میں ایک شخص میں کورونا وائرس کی تصدیق کے بعد ری

کررونا سے نمٹنے میں مودی ناکام:کانگریس

نئی دہلی// کانگریس نے کہا ہے کہ بحران ہر دور میں آتا ہے اور اس سے نمٹنا قیادت کی ذمہ داری ہوتی ہے لیکن وزیر اعظم نریندر مودی کورونا وبا سے نمٹنے کی ذمہ داری نبھانے میں ناکام ثابت ہوئے ہیں۔ کانگریس نے اپنے آفیشیل ٹویٹر ہینڈل سے جمعہ کے روز مسٹر مودی کو ہدف تنقید بناتے ہوئے کہا کہ وہ ذمہ داری نبھانے میں ناکام رہے ہیں۔پارٹی نے ٹویٹ کیا،‘ تبدیلی فطرت کا ضابطہ ہے اور انہی تبدیلیوں کے دوران کچھ بحران بھی آتے ہیں مگر ان سے نمٹنا قیادت کی ذمہ داری ہے اور وزیر اعظم نریندر مودی کورونا صحت ایمرجنسی سے نمٹنے میں ناکام ثابت ہوئے ہیں۔ بحران پہلے بھی آئے ہیں مگر ان کا وقت رہتے تدارک کیا گیا تھا’۔حکومت پر 21 دنوں کے لاک ڈاؤن کی تیاری نہ کرنے کا الزام عائد کرتے ہوئے کانگریس نے کہا،‘ کورونا بحران اور لاک ڈاؤن ملک کے کسانوں پر دوہری مار ہیں۔ فصل کاٹنے کے لیے کوئی انتظام نہیں کی گی

طبی عملے کی کوششیں قابل ستائش:کووند

نئی دہلی//صدر جمہوریہ رام ناتھ کووند نے کورونا وائرس (کووڈ 19) کے چیلنج سے نمٹنے میں مصروف طبی ماہرین اور دیگر تمام کی کوششوں کی تعریف کی ہے ۔ مسٹر کووند نے نائب صدر وینکیا نائیڈو، تمام ریاستوں اور مرکز کے زیرِ انتظام علاقوں کے گورنروں، لیفٹیننٹ گورنروں اور ایڈمنسٹر یٹر وں کے ساتھ کووڈ -19 سے متعلق مسائل پر بات چیت کی ۔ یواین آئی  

عطیہ کی فراہمی کیلئے چین کے ساتھ لگنے والی سرحد ایک دن کیلئے کھول دی جائے

سرینگر//چین نے پاکستان سے کہا ہے کہ وہ جمعہ کے دن ایک روز کیلئے اُس کے ساتھ لگنے والی سرحد کو کھول دے تاکہ کورونا وائرس کے پھیلائو کی وجہ سے پیدا صورتحال کا مقابلہ کرنے کیلئے ضروری عطیات پاکستانی علاقہ تک پہنچائی جاسکیں۔اطلاعات کے مطابق دونوں ممالک کی سرحد پر واقع کھونجیرب درہ عام طور پر یکم اپریل کو کھولا جاتا ہے جب مذکورہ درے سے برف پوری طرح پگھل جاتی ہے، تاہم اس سال مذکورہ سرحد کو کورو ناوائرس کے پھیلائو سے پیدا صورتحال کے پیش نظر غیر معینہ عرصہ کیلئے بند کیا گیا ہے۔اطلاعات میں بتایا گیا ہے کہ چین کے سفارتخانے نے پاکستان کی وزارت خارجہ کو ایک مکتوب روانہ کیا ہے کہ چین کے علاقہ زنگ جیانگ کا گورنر گلگت بلتستان خطے کیلئے ادویات اور ضروری سامان عطیہ کرنا چاہتے ہیں۔خط میں مزید لکھا ہے کہ زنگ جیانگ کا گورنر 2لاکھ عام ماسکس،2ہزارN.95قسم کی ماسکس،5وینٹی لیٹر،2ہزارٹیسٹنگ کٹس اور2ہزار خصوصی ط

سندھ طاس کمیشن کی میٹنگ ،ملتوی کرنے کی درخواست

نئی دہلی //نیوز ڈیسک //بھارت نے پاکستان سے کہا ہے کہ کورنا وائرس کی وبا ء مدنظر رکھتے ہوئے سالانہ سندھ طاس  کمیشن کی میٹنگ کو موخر کیا جائے ۔بھارت نے کہا ہے کہ یہ میٹنگ اس ہفتہ ہونے والی ہے ،تاہم پاکستان نے ابھی تک اس تعلق سے کوئی جواب نہیں دیا ہے ۔ یاد رہے کہ سندھ طاس کمیشن کی میٹنگ ہر سال بھارت اور پاکستان کے درمیان 31مارچ کو ہوتی ہے ۔ سندطاس آبی معاہدے کے تحت کمیشن کو سال میں ایک مرتبہ میٹنگ کرنی ہوتی ہے، جو باری باری پاکستان اور ہندستان میں منعقد ہوا کرتی آئی ہے ۔اس سے قبل کمیشن کی میٹنگ سال2018میں لاہور میں منعقد ہوئی تھی ۔عالمی اداہ صحت کی جانب سے کورنا وائرس کو ایک وباء قرار دینے کے بعد بھارت نے دونوں ممالک میں کورنا سے پیدا ہونے والے مسائل کی وجہ سے یہ میٹنگ موخر کرنے کی درخواست کی تھی ۔  

جموں کشمیر میں ’مواصلاتی بلیک آؤٹ ختم‘ کیا جائے:پاکستان

سرینگر// پاکستان نے ایک مرتبہ پھر بھارت سے کورونا وائرس پھیلائو کے پیش نظر جموں و کشمیر میں ’’مواصلاتی بلیک آؤٹ‘‘ ختم کرنے کا مطالبہ کیاہے۔ اسلام آباد میں ہفتہ وار پریس بریفنگ کے دوران پاکستانی دفتر خارجہ کی ترجمان عائشہ فاروقی نے بھارتی حکومت پر زور دیا کہ وہ کورونا وائرس سے لاحق خطرے کے پیش نظر جموں و کشمیر میں’’ مواصلاتی بلیک آؤٹ ‘‘ختم کرے۔انہوں نے کہا کہ بھارتی انتظامیہ کشمیر کے عوام کو وائرس سے متعلق بنیادی معلومات سے محروم کررہا ہے۔عائشہ فاروقی نے کہا کہ وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے حالیہ دنوں میں سارک اجلاس میں اپنے ہم منصبوں کے ساتھ بات چیت کے دوران سارک کے عمل کو جاری رکھنے کے عزم اعادہ کیا۔  

بھارت میں11اموات،606 افرادمتاثر

نئی دلی //ہندوستان میں کوروناوائرس کے معاملات تیزی سے بڑھ رہے ہیں اور ملک میں اب تک اس کے 606 کیسز سامنے آچکے ہیں۔ مرنے والوں کی تعداد 11 تک پہنچ چکی ہے ۔وزارت صحت نے بدھ کے روز بتایا کہ ملک میں کورونا کے 606 معاملوں کی تصدیق ہوچکی ہے ۔جن میں 563مریض ہندوستانی ہیں جبکہ 43 کا تعلق بیرون ممالک سے ہے ۔خیال رہے ہندوستان کووڈ19 کے دوسرے اور تیسرے مرحلے میں ہے اوران دومرحلوں میں متاثرین اوراموات کی تعدادمیں اضافہ ہوتاہے۔مرکزاورریاستی سرکاریں کوروناوائرس کے پھیلاو کو روکنے کے لئے ہر ممکن کوشش کر رہی ہیں،اوران کوششوں کی ایک اہم کڑی کے بطورپورے ملک میں منگل اوربدھ کی درمیانی رات سے21روزہ لاک ڈاون شروع ہوچکاہے۔ سائنس دانوں نے اندیشہ ظاہر کیا ہے کہ اگر ملک میں متاثرہ آبادی اس رفتار سے بڑھتی رہی تو مئی کے دوسرے ہفتے تک ہندوستان میں کورونا کے 13 لاکھ مریض ہو جائیں گے۔ ہندوستان میں کورونا کے معامل

ممتا بنرجی کا 18وزرائے اعلیٰ کومکتوب

کلکتہ //وزیر اعلیٰ ممتا بنرجی نے 18ریاستوں کے وزرائے اعلیٰ کو خط لکھ کر کہا ہے کہ لاک ڈائون کے درمیان پھنسے ورکروں کی حفاظت اور ان تک ضروری اشیاء کی فراہمی پر توجہ دی جائے ۔وزیرا علیٰ ممتا بنرجی نے اپنے خط میں کہا ہے کہ ریلوے ، ہوائی سروس اور بین ریاستی بس سروس بند ہیں ۔اس کی وجہ سے مختلف ریاستوں میں بنگال سمیت ملک کے دوسری ریاستوں کے ورکر اور یومیہ کام کرنے والے پھنسے ہوئے ہیں ، انہیں مالی قلت کا بھی سامنا ہے اس لئے ان لوگوں تک کھانے پینے کی اشیائ کی فراہمی کو یقینی بنایا جائے ۔لاک ڈائون کے دوسرے دن وزیر اعلیٰ ممتا بنرجی کلکتہ شہر کے مختلف مارکیٹ اور علاقوں کا دورہ کرکے بازار اور مارکیٹ کا جائزہ لیا ۔وزیرا علیٰ نے ایک بار اپیل کی لاک ڈائون شہریوں کی حفاظت کے پیش نظر کیا گیا ہے ۔اس لئے غیر ضروری طور پر گھر سے باہر نہ نکلیں ، وزیر اعلیٰ نے کہا کہ کھانے پینے کی اشیااور دیگر ضروری سامان ک

پاک زیر انتظام کشمیر میں3 ہفتوں کیلئے مکمل لاک ڈاؤن کا اعلان

 سرینگر //پاکستانی زیر انتظام کشمیر کے وزیراعظم راجا فاروق حیدر نے ریاست میں 3 ہفتوں کے لیے مکمل لاک ڈاؤن کا اعلان کردیا۔معلوم ہوا ہے کہ پاکستانی وزارت داخلہ نے پاکستانی زیر انتظام کشمیر ، گلگت بلتستان اورملک کے چاروں صوبوں میں فوج کو طلب کیا ہے۔ اپنے ایک ویڈیو پیغام میں انہوں نے کہا کہ آج رات 12 بجے سے پاکستانی زیر انتظام کشمیر میں مکمل لاک ڈاؤن کردیا جائے گا تاہم لاک ڈاؤن سے مراد کوئی کرفیو نہیں ہے۔انہوں نے کہا کہ یہ شہریوں کے مفاد میں کیا جارہا ہے، ساتھ ہی انہوں نے بتایا کہ 3 ہفتوں کے لیے ہر طرح کے اجتماعات پر پابندی لگائی گئی ہے۔راجا فاروق حیدر کا کہنا تھا کہ عوام کے بین ضلعی اور پاکستانی زیر انتظام کشمیر بھر میں سفر پر پابندی ہوگی۔اس کے علاوہ ان کا کہنا تھا کہ عوام کے غیر ضروری سفر کرنے اور باہر نکلنے پر پابندی ہو گی جبکہ ہر قسم کا ٹرانسپورٹ مکمل معطل رہے گا۔ وزیراعظم پاک

راجیہ سبھاکیلئے انتخابات ملتوی

نئی دہلی// الیکشن کمیشن نے کورونا وائرس کے پھیلاؤ کودیکھتے ہوئے راجیہ سبھا کے دو سالہ انتخابات کو ملتوی کر دیا ہے ۔ کمیشن نے گذشتہ دنوں راجیہ سبھا کی 55 سیٹوں کے لیے 26 مارچ کو انتخابات کرانے کا اعلان کیا تھا،جس سے 37 امیدوار بلا مقابلہ منتخب کر لئے گئے تھے ۔اب باقی 18 امیدواروں کے لئے 26 مارچ کو الیکشن ہونا تھا۔ان میں آندھرا پردیش، گجرات، منی پور، مدھیہ پردیش، اور جھارکھنڈ کے امیدوار شامل ہیں۔الیکشن کمیشن نے منگل کو یہاں جاری بیان میں کہا کہ گیارہ مارچ کو عالمی ادارہ صحت کی طرف سے کورونا وائرس کو دنیا بھر میں عالمی وبا کا اعلان کئے جانے کے بعد حکومت نے ملک میں تمام ریلوے سروسز اور ہوائی جہاز کی خدمات کو بند کر دی اور کئی ریاستوں میں لاک ڈاؤن کا اعلان کیاگیاہے ۔اسے دیکھتے ہوئے راجیہ سبھا انتخابات کو ملتوی کیا جا رہا ہے اور حالات معمول پر آنے کے بعد انتخابات کی نئی تاریخوں کا اعلان کیا

پاکستانی زیرانتظام کشمیرمیں ٹرانسپورٹ سروس بند

سرینگر// پاکستانی زیر انتظام کشمیر حکومت نے کورونا وائرس کے سبب عائد کی گئی ہیلتھ ایمرجنسی کے تحت جمعہ کی رات صوبے بھر میں ٹرانسپورٹ سروس بند کردی ۔یو پی آئی کے مطابق محکمہ داخلہ کی جانب سے جاری اعلامیے کے مطابق پاکستانی زیر انتظام کشمیر میں تین دن کے لیے کسی بھی پبلک ٹرانسپورٹ کو داخل یا باہر جانے کی اجازت نہیں ہو گی۔حکومت نے اعلان کیا ہے کہ احکامات کی خلاف ورزی کرنے والوں کو قرار واقعی سزا دی جائے گی۔ڈپٹی کمشنر مظفر آباد بدر منیر نے کہا کہ پابندی کا اطلاق مقامی پبلک ٹرانسپورٹ پر بھی ہو گا۔ادھر وزیر صحت ڈاکٹر نجیب نقی کیانی نے کہا کہ چار مشتبہ مریضوں کے نمونے جمعرات کو نیشنل انسٹیٹیوٹ آف ہیلتھ بھجوا دیئے گئے۔مجموعی طور پر پاکستانی زیر انتظام کشمیر میں 40 نمونے نیشنل انسٹیٹیوٹ آف ہیلتھ بھیجے گئے تھے جس میں سے 23 کی رپورٹیں موصول ہو چکی ہیں جن میں سے ایک شخص میں وائرس کی موجودگی کی

کشمیر کے بارے میں بین الاقوامی برادری کو جانکاری دی ہے:مرکز

سرینگر//مرکزی سرکار نے جمعرات کو کہا کہ اُس نے جموں کشمیر سے متعلق دفعہ370کی منسوخی اور شہریت ترمیمی قانون کے بارے میں بین الاقوامی برادری کو مطلع کیا ہے۔وزارت خارجہ کے وزیر مملکت وی مرلی دھرن نے لوک سبھا میں ایک سوال کا جواب دیتے ہوئے کہا کہ حکومت کی کوششوں کی وجہ سے بین الاقوامی برادری سمجھ گئی ہے کہ جموں کشمیر بھارت کا اندرونی معاملہ ہے اور پاکستان کی دراندازی بھارتی شہریوں کیلئے خطر ناک ہے۔وزیر موصوف نے دعویٰ کیا کہ دنیا کے سبھی ممالک نے پاکستان سے کہا ہے کہ وہ اپنی سر زمین کو بھارت کیخلاف استعمال ہونے کی اجازت نہ دے۔انہوں نے کہا ’’حکومت نے بین الاقوامی برادری تک پہنچ کر جموں کشمیر اور شہریت ترمیمی قانو ن کے بارے میں وضاحت کی ہے،دنیا کے سبھی ممالک نے بھارت کی پوزیشن کو سمجھا بھی ہے،دنیا جان گئی ہے کہ بھارت کے جمہوری ادارے سبھی معاملات کو حل کرنے کی اہلیت رکھتے ہیں۔ 

پاکستان سے لوٹنے والے کشمیر ی طلاب واگہ سرحد پر درماندہ ،گھروں کی طرف سفر کرنے یا پاکستان واپس جانے کی اجازت نہیں

سرینگر//کورنا وائرس کے ڈر کے پیش نظر پاکستان میں زیر تعلیم درجنوں کشمیری طلاب وگہ سرحد پر درماندہ ہیں کیونکہ اُنہیں بھارتی علاقے میں داخل ہونے کی اجازت نہیں دی جارہی ہے ۔اس دوران مذکورہ طلاب کے رشتہ داروں نے اپنے بچوں کی گھر واپسی کا مطالبہ کیا ہے ۔انہوں نے الزام عائد کہ اُن کے بچوں کونہ واپس پاکستان جانے کی اجازت دی جا رہی ہے اور نہ ہی سرحد پار کرکے بھارت میں داخل ہونے کی اجازت ددی جارہی ہے ۔ دنیا بھر کے ساتھ ساتھ پاکستان میں بھی کورنا وائرس کے پھیلائو کے پیش نظر وہاں زیر تعلیم کشمیر طلاب نے گھر واپسی کا فیصلہ تو کیا لیکن وہ واگہ سرحد پر درماندہ ہوکر رہ گئے ہیں ۔ معلوم ہوا ہے کہ پاکستان کی مختلف یونیورسٹیوں اور کالجوںمیں زیر تعلیم کشمیر ی طلاب جونہی واگہ سرحد پر پہنچ گئے تو انہیں بھارتی علاقے میں داخل ہونے کی اجازت دی نہیں دی گئی اور نہ اُنہیں واپس پاکستانی علاقے کی طرف جانے دیا جارہا

بنگلور میں کام کررہے کشمیریوں کی پر وفائلنگ

سرینگر// کرناٹک میں پولیس کشمیریوں کی پروفائلنگ کررہی ہے اوربنگلورو پولیس نے کمپنیوں کو جموں و کشمیر سے تعلق رکھنے والے افراد کی تفصیلات طلب کرنے کے لئے  نوٹس جاری کی ہے۔ پولیس کا کہنا ہے کہ انہوں نے بزنس پارک میں واقع کمپنیوں سے امن و امان برقرار رکھنے کے لئے جموں کشمیر کے باشندوں کی تفصیلات فراہم کرنے کیلئے کہا ہے۔ کارکنوں اور وکلا نے پولیس نوٹس کی تنقید کرتے ہوئے اسے جموں و کشمیر کے لوگوں کی غیرضروری پروفائلنگ قرار دیاہے۔ سمپی گیہلی پولیس اسٹیشن کی جانب سے جاری کردہ نوٹس کے مطابق ’’امن و امان کے مقصد کے لئے ، براہ کرم ان ملازمین کی تفصیلات بتائیں جو اصل میں جموں و کشمیر کے رہنے والے ہیں اور ناگوارہ رنگ روڈ کے مانیاٹا ایمبیسی پارک میں مختلف کمپنیوں میں کام کر رہے ہیں‘‘۔ نوٹس پر مقامی ایس ایچ اوکے دستخط ہیں اور انہوں نے جموں و کشمیر کے ملازمین کے نام ، موب

دلی میں بد امنی پھیلانے والے آزاد کیوں؟

سرینگر //کانگریس کے سینئر لیڈر اور معروف قانون دان کپل سبل نے جمعرات کو کہا کہ جموںوکشمیر کے تین سابق وزرائے اعلیٰ کو بقول انتظامیہ اس وجہ سے نظر بند رکھا گیا ہے کہ کیونکہ اُن کی جانب سے بد امنی کا سبب بننے والے بیانات دئے جاسکتے تھے، تاہم دہلی میں ہنگامہ برپا کرنے والے بیانات دینے والے لیڈران اب بھی آزادانہ طورپر گھوم پھر رہے ہیں۔ راجیہ سبھا میں دہلی فسادات پر بحث میں حصہ لیتے ہوئے راجیہ سبھا ممبر سبل نے کہا کہ منصوبہ بند سازش کے تحت دہلی میں فسادات کروائے گئے۔ انہوںنے کہا کہ مرکزی حکومت ایسے افراد کے خلاف کارروائی کرنے سے قاصر نظر آرہی ہے جنہوںنے فسادات برپا کرنے والے بیانات جاری کئے۔ انہوںنے کہاکہ فسادات میں ملوث ایسے افراد جنہوںنے لوگوں کو تشدد کیلئے اُکسایا ، کے خلاف سخت سے سخت کارورائی عمل میں لانے کی ضرورت ہے ۔ کپل سبل کے مطابق مرکزی حکومت نے ابھی تک اُن لیڈران کے خلاف کوئی کا