تازہ ترین

کچھوا اور خرگوش

افسانچہ

4 اگست 2019 (00 : 01 AM)   
(      )

پرویز انیس
کچھوے اور خرگوش میں کسی بات کو لے کر اختلاف ہوگیا۔ اختلاف جب آپس میں نہیں سلجھا تو سارا معاملہ جنگل کے راجا شیر کے پاس پہنچا۔ شیر نے دونوں کو سمجھانے کی بہت کوشش کی لیکن دونوں اپنی ضد پر اڑے رہے۔ آخر کار ایک بزرگ لومڑی کے مشورہ سے یہ طے پایا کہ دونوں کے درمیان ایک دوڑ کرائی جائے گی اور جو جیتے گا فیصلہ اس کے حق میں دیا جائے گا۔ دونوں اس بات پر راضی ہوگئے۔ لیکن بزرگ لومڑی جو کچھوے کی حمایتی تھی، اس نے شیر کو مشورہ دیا کہ، دوڑ میں دونوں کی رفتار کا لحاظ رکھ کر فاصلے کا تعین کیا جائے۔ شیر نے بزرگ لومڑی کی یہ تجویز مان لی اور مقابلے کا دن طے کر دیا۔
طے شدہ دن پر سارا جنگل جمع ہوگیا۔ دونوں جب رفتار کے حساب سے طے شدہ جگہ پر پہنچ گئے تو ایک نوجوان شیر کی گرجدار گراہٹ کے ساتھ دوڑ کا آغاز ہوا۔ سارا جنگل اپنے اپنے حساب سے اندازہ لگا رہا تھا اور سب اس دوڑ کو جیتنے والے کا انتظار کررہے تھے۔ تبھی دور سے خوگوش آتا نظر آیا۔ اسے دیکھتے ہی پورا جنگل جیت کے نعروں سے گونج اٹھا۔ خرگوش کے بہت دیر بعد  کچھوا بھی آگیا اور دونوں خاموشی سے شیر کے سامنے کھڑے ہوگئے۔ شیر نے کچھوے کو مخاطب کرتے ہوئے پوچھا،
"یہ بتاؤ تم اس دوڑ میں کیوں ہارے"
کچھوے نے شیر کی تعظیم کے بعد کہا،
"مہاراج، بات دراصل یہ ہے کہ میرے سامنے ہمارے بزرگوں کو وہ تاریخی دوڑ تھی جس میں ہمیں فتح نصیب ہوئی تھی۔ لیکن میں نے اس سے منفی نتیجہ اخذ کیا اس لئے میں ہار گیا"۔
راجا نے پھر خرگوش سے سوال کیا، 
"یہ بتاؤ تم اس دوڑ میں کیسے جیتے ؟
"وہ اس لئے مہاراج، کہ میرے سامنے بھی ہمارے اجداد کی وہی تاریخی دوڑ تھی جس میں ہمیں شکست نصیب ہوئی تھی لیکن میں نے اس سے مثبت نتیجہ اخذ کیا اس لئے میں جیت گیا"
خرگوش نے خود اعتمادی سے کہا۔
شیر نے خرگوش کے حق میں فیصلہ سنایا اور پورا جنگل خرگوش کی جےجےکار سے گونج اٹھا۔
���
متصل لال مدرسہ ،وارث پورہ کامٹی
ناگپور (مہاراشٹر)
موبائل:- 9049548326