تازہ ترین

ہندپاک کھیل تعلقات میں فروغ کا امکان | بھارتی ٹیم ’ٹینس ورلڈ کپ میں شرکت کیلئے پاکستان جانے پر رضامند

29 جولائی 2019 (00 : 12 AM)   
(      )

نیو ڈسک
نئی دہلی/ ہندوستان اور پاکستان کے درمیان دو طرفہ کھیل تعلقات طویل عرصے سے منقطع ہیں لیکن ہندوستانی ڈیوس کپ ٹیم اس سال ستمبر میں ڈیوس کپ مقابلے کے لئے پاکستان کا دورہ کرے گی۔گزشتہ 55 برسوں میں یہ پہلا موقع ہوگا جب ہندستانی ڈیوس کپ ٹیم پاکستان میں کھیلے گی۔ آل انڈیا ٹینس ایسوسی ایشن کے سیکرٹری ھرنمے چٹرجی نے اس کی تصدیق کرتے ہوئے کہا کہ یہ کوئی دو طرفہ سیریز نہیں ہے ، یہ ٹینس ورلڈ کپ ہے اس ٹیم کو اس میں حصہ لینا ہوگا۔ اس معاملے میں حکومت سے کوئی بات نہیں ہوئی ہے کیونکہ عالمی مقابلے ہونے کی وجہ سے ہم بین الاقوامی اولمپک کمیٹی کے چارٹر پر عمل کرنے کے لئے پابند ہیں۔ چٹرجی نے بتایا کہ چھ کھلاڑیوں کی ٹیم، اسپورٹ عملے اور ایک کوچ پاکستان جائیں گے ۔ اس دورے کے لئے ابھی ٹیم کا اعلان نہیں ہوا ہے ۔ہندستان کے ٹاپ ڈبلز کھلاڑی روہن بوپنا نے حال ہی میں کہا تھاکہ مجھے اس مقابلے کا انتظار ہے ۔ میں نے پاکستان کے کھلاڑی اعصام الحق قریشی کے ساتھ بات چیت کی تھی اور انہوں نے کہا تھا کہ فکر کرنے جیسی کوئی بات نہیں ہے ۔ میں پاکستان میں ان کے ساتھ مقابلہ کھیلنے کو تیار ہوں۔ قابل ذکر ہے کہ قریشی ڈبلز مقابلوں میں طویل عرصے تک بوپنا کے جوڑی دار رہے تھے اور اس جوڑی کو انڈو پاک ایکسپریس کہا جاتا تھا۔ہندستان اور پاکستان کے درمیان ڈیوس کپ ایشیا اوشیانا زون کے گروپ ایک میچ اسلام آباد کے پاکستان ا سپورٹس کمپلیکس میں گراس کورٹ پر کھیلا جائے گا۔ اس سال ستمبر کے مقابلے کا فاتح عالمی گروپ کوالیفائرس میں پہنچے گا۔حال میں بین الاقوامی اولمپک کمیٹی (آئی او سی) نے ہندستان پر بین الاقوامی کھیلوں کی میزبانی پر عائد پابندی ہٹائی تھی۔ دراصل اس سال کے اوائل میں دہلی میں شوٹنگ ورلڈ کپ منعقد ہوا تھا جس میں پاکستان کے دو نشانے بازوں کو عالمی کپ میں حصہ لینے کے لئے ویزا نہیں مل پایا تھا۔آئی او سی نے اس معاملے پر سخت قدم اٹھاتے ہوئے پاکستانی نشانے بازوں کے مقابلے سے اولمپک کوٹہ ہی ختم کر دیا تھا۔ دہلی میں عالمی کپ کی میزبانی کسی طرح بچ پائی تھی۔ لیکن آئی او سی نے اس کے بعد ہندوستان پر بین الاقوامی کھیلوں کی میزبانی کو لے کر پابندی لگا دی تھی۔حکومت ہند کے آئی او سی کو یقین دینے کے بعد عالمی ادارے نے یہ پابندی ختم کی تھی۔ ہندستانی وزارت کھیل نے کہا تھا کہ کھیل ایوینٹ کی میزبانی میں کسی کی شرکت کو لے کر کوئی پریشانی نہیں ہونے دی جائے گی۔ ہندستانی اولمپک ایسوسی ایشن (آئی اواے ) نے بھی اس فیصلے کا خیر مقدم کیا تھا۔ہندستان کے لیے پاکستان میں یہ مقابلہ کھیلنا ڈیوس کپ کے لحاظ سے اہم ہے ۔ آخری بار ہندستان نے مارچ 1964 میں لاہور کا دورہ کیا تھا اور پاکستان سے مقابلہ 4-0 سے جیتا تھا۔ ہندستان کو گزشتہ سال عالمی گروپ پلے آف میچ میں سربیا سے 0-4 سے شکست کا سامنا کرنا پڑا تھا جس کے بعد اسے اس سال گروپ ایک میں لوٹنا پڑا ہے ۔