تازہ ترین

تنخواہیں پنچایتوں کے ساتھ منسلک کرنے کا معاملہ

اننت ناگ اور کرگل میںآنگن واڑی ورکروں کافیصلے کے خلاف احتجاج

23 جولائی 2019 (00 : 12 AM)   
(      )

عارف بلوچ+نورالاسلام
اننت ناگ+کرگل//ریاستی انتظامی کونسل کی طرف سے آنگن واڈی ورکروں اورہیلپروں کی تنخواہوں کو پنچایتوں کے ساتھ منسلک کرنے کے خلاف اننت ناگ اور کرگل میں خواتین ملازمین نے احتجاج کرتے ہوئے سرکاری فیصلے کو ناقابل قبول قرار دیا۔ اننت ناگ میں آنگن واڈی ورکروں اور ہیلپروں نے حکومت کے نئے حکم نامہ کے خلاف احتجاج کیا اور فیصلہ واپس لینے کی مانگ کی۔آنگن واڈی ورکروں اور ہیلپروں کی ایک بڑی تعداد نے وزیر باغ میں گرام پنجائیت کے تحت تنخواہ واگذار کرنے کے حکم نامہ کے خلاف احتجاج کرتے ہوئے جم کر نعرہ بازی کی اور گورنر ستیہ پال ملک سے اپیل کی کہ وہ حکم نامہ کو منسوخ کریں ،آنگن واڈی ورکرس و ہیلپرس ایسوسیشن اننت ناگ کی ضلع صدر فہمیدہ کا کہنا تھا’’ ہمیںگورنر نے پنجوں ،سرپنچوں اور کونسلروں کے حوالے کیا جو ہمیں قطعی منظور نہیں ہے ،لہذا فیصلے کو واپس لیا جائے۔‘‘اْنہوں نے کہا کہ جب تک فیصلہ منسوخ نہیں کیا جائے گا احتجاج جاری رہے گا۔اس دوران کرگل میںجموں کشمیر آنگن واڑی ورکرس اینڈ ہیلپرس ایسو سی ایشن کے جھنڈے تلے ملازمین نے ریاستی انتظامی کونسل کے فیصلے نعرہ بازی کرتے ہوئے اس کو فوری طور پر واپس لینے کا مطالبہ کیا۔جموں کشمیر آنگن واڑی ورکرس اینڈ ہلپرس ایسو سی ایشن کرگل کی صدر زہرہ بانونے نامہ نگاروں کے ساتھ بات کرتے ہوئے کہا’’ ہم اس حکم نامہ کی نہ صرف واپسی کا مطالبہ کرتے ہیں،بلکہ آئی سی ڈی ایسوں کے بجٹ واگزاری میں بھی اضافہ کریں۔‘‘ انہوں نے مزید کہا کہ سرکار کم از کم تنخواہیں اور سماجی تحفظ کے علاوہ 45ویں آئی ایل سی میں سفارشات کے تحت پنشن بھی فرہم کریں۔