تازہ ترین

زمیں ساز

افسانہ

21 جولائی 2019 (00 : 01 AM)   
(      )

سکندر علی شکن
آفرین آباد پلیٹ فارم ، مسافروں سے کھچا کھچ بھرا ہوا تھا ابھی افروز پلیٹ فارم پہ پہنچا ہی تھا کہ اس کے سامنے سے ایک عجیب قسم کا شخص گزرا۔ چہرے پہ لمبی داڑھی اور مونچھیں تھیں،چلنے کا اندار بھی عام انسانوں جیسا نہیں تھا۔ افروز اس شخص کے ساتھ -ساتھ چلتا ہوا ٹرین میں جاکر ٹھیک اس کے سامنے بیٹھ گیا۔ افروز اس سے کلام کرنا چاہتا تھا مگر سمجھ میں نہیں آ رہا تھا کہ بات چیت کیسے شروع کرے۔ کچھ دیر تک سوچنے کے بعد آخر کار افروز اس سے ہمکلام ہوا ۔
"بابا آپ کہاں جا رہے ہیں؟"
"میں آپ کو بابا دکھتا ہوں!"
"جی نہیں" افروز لڑکھڑا کر بولا۔ 
اس پہ اجنبی ہنستے ہوے بولا۔"بھائی میں پی ۔کے، خلائی تحقیق تنظیم کا سائنسداں ہوں"
"پی۔ کے "
"ہاں بھائی تخلص پی۔ کے، نام پرویز کمال، ویسے آپ کی تعریف ؟"
"مجھے افروز کہتے ہیں اردو ادیب ہوں"
"بڑی خوشی ہوئی ادیب صاحب آپ سے ملکر "
"مجھے بھی"
" ویسے ادیب صاحب! اگر میں آپکو اپنی کہانی سناوں تو کیا آپ اسے قلم بند کریں گے ؟ "
"بالکل جناب ! کیوں نہیں آپ سنائیں تو !" 
افروز کی اس بات کو سن کر پی کے اپنی کہانی کچھ اس طرح سنانے لگا ۔۔۔۔۔
خلائی طیارہ بڑے آب و تاب کے ساتھ خلا میں پرواز کر رہا تھا ۔ گیارہ خلائی محققین پر مشتمل یہ مشن آفتاب کے متعلق خصوصی معلومات حاصل کرنے کے لئے خلا میں روانہ کیا گیا تھا ۔اس خلائی مشن کی کمان میرے ہاتھوں میں تھی اور خلائی طیارہ سورج کے بہت ہی قریب پہنچ چکا تھا ۔سائنسداں آفتاب کی نئی -نئی تصاویر کیمرے میں مقید کرکے زمین پہ بھیج رہے تھے ۔ سولر ونڈز (شمسی ہوائیں) طوفان کے مانند چل رہی تھیں۔ طیارے میں لگی تھرمل پروٹیکشن سیسٹم t.p.s.، جو کہ طیاروں کو ٹھنڈا رکھنے کے لئے استعمال کیاجاتا ہے ، بے اثر ہو رہا تھا اور سورج کی گرمی سے طیارہ دہک رہا تھا۔ ہم نے کچھ مزید معلومات حاصل کرنے کے مقصد سے خلائی طیارے کو اور آگے بڑھایا۔ دیکھتے ہی دیکھتے طیارہ آگ کا گولا بن گیا اور زور دار دھماکے کے ساتھ ملبے میں تبدیل ہوکر سورج کی آغوش میں سما گیا ۔ زمین پہ بیٹھے خلائی تحقیق تنظیم کے سائنسدانوں کے کمپیوٹر سے سگنل غائب ہو چکا تھا ۔
سائنسدانوں کی نظر میں دسوں ساتھیوں کے ساتھ ساتھ میں بھی مر چکا تھا مگر حقیقت تو یہ تھی کہ جب دھماکہ ہوا تو میں خلائی طیارے سے باہر ہو گیا۔
اور کسی انجانے سیارے کی کشش نے مجھے اپنی طرف کھینچ لیا، جس کی وجہ سے میں اس انجانے سیارے پہ جا گرا ۔ 
کافی دیر بعد جب مجھے ہوش آیا تو اپنے آپ کو ایک انجانی وادی میں پایا جہاں بہت تیزی کے ساتھ ٹھنڈی ٹھنڈی ہوائیں طوفان کی مانند چل رہی تھیں۔ زمین پہ انسانی قدموں کے نشانات دکھ رہے تھے ، مٹی عجیب طرح کی تھی ، ایک دم سرخ ! 
میرا جسم بری طرح آگ میں جھلس چکا تھا میں درد سے کراہ رہا تھا لیکن خود کو سنبھالا اور چاہا کہ خلائی تحقیق تنظیم کو سگنل بھیجوں مگر یہ کیا ؟ 
میرا آلہ کام ہی نہیں کر رہا تھا، شاید یہاں کوئی ایسی مشین لگی تھی جو میرے سگنل کو آگے جانے سے روک رہی تھی۔ میں نے لاکھ کوشش کی مگر سگنل نہیں گیا۔
اس پر مجھے بہت غصہ آیا اور میں نے ریموٹ ایک پتھر پرٹیخ دیا۔ ریموٹ زمین سے ایکدم چپک چکا تھا اور مجھے لگا کہ میں کسی مقناطیسی زمین پہ ہوں۔
خیر میں وہاں سے آہستہ آہستہ قدم بڑھاتے ہوئے چلنے لگا۔ ابھی چند قدم کی دوری ہی طے کر پایا تھا کہ چند آدمیوں کا جھرمٹ آتا دکھائی دیا۔ وہ لوگ میرے پاس آئے اور نہ جانے آپس میں کیا گفتگو کرنے لگے۔ میں انکی بولی نہیں سمجھ پایا۔ وہ لوگ یکا یک مجھ پر ٹوٹ پڑے اور مجھے مارنے لگے۔ میں اپنے آپ کو بڑی مشکل سے بچا کر بھاگا اور بھاگتے بھاگتے کافی دور نکل آیا ۔ مجھے لگا کہ وہ لوگ میرا خلائی لباس دیکھ کر شاید ڈر گئے ،آگے پھر ایسا نہ ہوں اس لئے میں نے اپنا خلائی لباس اتار کر پھینک دیا ۔ کافی تھک چکا تھا اور تھکان دور کرنے کے غرض سے زمین پر لیٹ گیا ۔
جب میں نے آرام سے فارغ ہوکر اٹھنے کا قصد کیا تو اٹھ نہ سکا۔ میرے کپڑے زمین سے فیوی کول کی طرح چپک چکے تھے۔ مجھے بہت ڈر لگا اور میرے دماغ میں فورا آیا کہ مجھے کپڑے اتار دینے چاہئں، چنانچہ میں نے ایسا ہی کیا۔ اب میرے جسم پر صرف انڈر ویئر تھا۔ میرے دماغ میں خرافات اُمڈ آئے کہ دیکھوں انڈر ویئر چپکتا ہے کہ نہیں ، میں نے انڈر ویئر زمین پر لیٹ گیا، مگر یہ کیا ؟ میرا انڈر ویئر زمین سے نہیں چپکا اور میں سمجھ گیا کہ یہ مقناطیسی زمین سوتی کپڑوں کو نہیں چپکاتی۔ یہ معلومات میرے لئے حیران کن اور بڑی ترجیحات کی حامل تھیں۔ اب مجھے مکمل یقین ہو گیا تھا کہ میں اپنی دنیا میں نہیں بلکہ کسی دوسرے سیارے پہ ہوں ۔
خیر میں وہاں سے اور آگے بڑھا۔ بھوک اور پیاس سے تڑپ رہا تھا، میرے جسم کی توانائی ختم ہو چکی تھی اور میرے ہاتھ پیر کام نہیں کر رہے تھے اسی حالت میں زمین پر گر پڑا ۔
کچھ دیر بعد ایک عجیب انسان میرے قریب آیا۔ اس کے کان بہت بڑے بڑے، دانت باہر نکلے ہوئے اور شکل ڈراونی تھی۔ وہ مجھ سے کچھ پوچھ رہا تھا مگر میں اس کی بات نہیں سمجھ پا رہا تھا ۔ 
اسے مجھ پہ رحم آیا اور وہ مجھے اپنے ساتھ لے گیا۔ایک ہیلمیٹ نما آلہ مجھے پہنا دیا جس سے یکایک مجھے بجلی جیسا جھٹکا لگا اور میں درد سے کراہ اٹھا۔ کچھ دیر بعد مجھے کچھ عجیب سا لگنے لگا۔ جیسے میرے دماغ میں وہاں کی کا سسٹم نصب ہوچکا تھا۔ اب میں اس کی زبان میں بات چیت کر سکتا تھا۔ اس کے دریافت کر نے پر میں نے اسے اپنی پوری کہانی سنائی مگر اسے میری بات پہ اعتبار نہ آیا۔ اسے لگا کہ میں پاگل ہوں ! خیر وہ میرا ہمدرد بن کر میرے ساتھ رہنے لگا۔
رفتہ -رفتہ ہم دونوں ایک دوسرے کے بہت قریب ہو گئے اور وہ مجھے باہر گھمانے لے جاتا ۔ 
دیکھنے میں وہاں کا آسمان ایک دم سرخ اور زمین کے بہت قریب دکھتا تھا۔ ایسا معلوم ہوتا تھا کہ آسمان زمین کے بہت قریب ہے۔ اس نے مجھے بتایا کہ یہ آسمان نہیں بلکہ شمسی توانائی کا تختہ ہے، جسے ہمارے سائنسدانوں نے فضاء میں نصب کر کے بجلی اسٹیشن بنا دئے ہیں ۔
ایک دن وہ مجھے ایک اونچے ٹیلے کے پاس لے گیا اور ہم دونوں ٹیلے پہ چڑھنے لگے۔ وہ تو ٹیلے پہ چڑھ گیا مگر جیسے ہی میں نے ٹیلے پر قدم رکھا مجھے ایک جھٹکا سا لگا۔ میں ٹیلے سے کافی دوری پہ جا گرا ۔اس پہ وہ شخص بولا تم ٹھیک کہتے تھے تم میرے سیارے کے رہنے والے نہیں ہو۔
پی کے اس سے آگے کچھ اور کہتا کہ ٹرین ہارن دیکر رک گئی۔ افروز نے کھڑکی سے باہر دیکھا تو ویران گڑھ پلیٹ فارم اس کے آنکھوں کے سامنے تھا ۔ پی کے نے کہا دوست اب ہم پھر کبھی ملیں گے، تب ہم اس ادھوری کہانی کو مکمل کرنگے۔
خیر الوداع دوست!
اتنا کہہ کر پی کے انسانی ہجوم میں افروز کے نظروں سے اوجھل ہو گیا ۔
پی کے کے جانے کے بعد کافی دیر تک افروز اس کہانی کو دل ودماغ میں لاکر سوچتا رہا۔ اسے پی کے کے سیاری سفر کی کہانی بہت دلچسپ اور حیران کُن لگی اس کے دماغ میں ایک ایسی نئی بات آئی کہ خلائی طیارہ تباہ ہونے کے بعد بھی پی کے بچ گیا تو ہو سکتا ہے کہ جو محققین خلائی تحقیق کے لئے خلا میں رہ گئے اور حادثے کا شکار ہوکر غائب ہو گئے شاید وہ بھی زندہ ہوں اور اُن میں سے کوئی اگلے سٹیشن پر ملے۔ یہی سوچتے سوچتے اُسکی آنکھ لگ گئی اور وہ خوابوں کی دنیا میں کھو گیا۔ جب ٹرین ایک جھٹکے کے ساتھ رُک گئی تو وہ اُٹھا اور تیز تیز قدموں سے پلیٹ فارم پر اُتر گیا۔ اُس نے جیسے ہی زمین پر قدم رکھا تو جیسے خلائی جہاز سے گر کر سیارے کی زمین کے ساتھ چپک گیا، کیونکہ ٹرین اُس سٹیشن سے کئی سٹیشن آگے نکل چکی تھی، جہاں اُسے اترنا تھا اور جس کام کی غرض سے وہ گھر سے نکلا تھا وہ کام ہونے کا وقت بھی گزر چکا تھا۔
بہرائچ اتر پردیش
موبائل نمبر؛9519902612