تازہ ترین

دکاندار کے قتل میں ملوث 2 افراد گرفتار | پولیس نے دو ہفتوں میں کیس حل کیا:ایس ایس پی بارہمولہ

16 جولائی 2019 (40 : 10 PM)   
(      )

فیاض بخاری
بارہمولہ // بارہمولہ پولیس نے 17 رو ز قبل دکاندار، سمیر احمد آہنگر کے قتل کے معاملے کو حل کرنے کا دعویٰ کرتے ہوئے کہا ہے کہ انہوںنے ملوث دو افراد کو گرفتار کر لیا ہے جس کے قبضے سے ایک پستول بھی برآمد کیا گیا ہے۔ ایس ایس پی بارہمولہ عبدالقیوم نے منگل کو پولیس لائین بارہمولہ میں ایک پریس کانفرنس سے خطاب کے دورانکہا کہ پولیس نے دکاندار، سمیر احمد آہنگر کے قتل میں ملوث دو افراد کو گرفتار کرلیا ہے۔ انہوںنے کہا کہ گرفتار شدگان کی شناخت عاقب بشیر اور عاقب شالہ کے طور ہوئی ہے۔پولیس کے مطابق 30جون شام 8بجکر 45منٹ پر جنگجوئوں نے آزاد گنج بارہمولہ میں 28سالہ دکاندار سمیر یوسف آہنگر پر گولیاں چلائیں تھیںجس کے نتیجے میں وہ شدید طورپر زخمی ہوا، اگر چہ اسے فوری طورپر علاج ومعالجہ کی خاطر ضلع اسپتال بارہمولہ منتقل کیا گیا جس کے بعد اُسے صورہ میڈکل انسٹچوٹ منتقل کیا گیا تاہم وہ وہاں زخموں کی تاب نہ لا کر چل بسا ۔ پولیس نے معاملے کی نسبت ایف آئی آر زیر نمبر 112/2019کے تحت کیس درج کرکے تحقیقات شروع کی۔ ایس ایس کے مطابق معاملے کی تہہ تک پہنچنے کی خاطر اے ایس پی  بارہمولہ کی سربراہی میں خصوصی تحقیقاتی کمیٹی کا قیام عمل میں لایا گیا۔ چنانچہ دوران تحقیقات پولیس نے عاقب بشیر اور عاقب شالہ ساکنان اولڈ ٹاون بارہمولہ سے پوچھ گچھ کی جس دوران معلوم ہوا کہ مذکورہ افراد ہی دکاندار کے قتل میں براہ راست ملوث ہیں۔ علاوہ ازیں پولیس نے (آلہ قتل (پستول جسے قتل کی اس واردات کو انجام دیا گیا کو بھی برآمد کرکے ضبط کیا۔پولیس بیان کے مطابق گرفتار شدگان کا ایک اور ساتھی ،عزیر امین بھی دکاندار سمیر یوسف کے قتل میں شامل ہے،جس نے پولیس کے مطابق بعد میں حزب المجاہدین میں شمولیت اختیار کی۔