تازہ ترین

۔44طیارہ حادثوں میں سے اب تک صرف 27 کی تحقیقات مکمل: راجناتھ سنگھ

16 جولائی 2019 (00 : 01 AM)   
(      )

 نئی دہلی// وزیر دفاع راج ناتھ سنگھ نے آج راجیہ سبھا میں بتایا کہ ہندوستانی فضائیہ کے مختلف طیارہ حادثوں کی تحقیقات کے لئے درج 44 معاملات میں کورٹ آف انکوائري تشکیل دیا گیا تھا جس میں سے اب تک صرف 27 کی ہی جانچ مکمل ہوئی ہے ۔  مسٹر راجناتھ سنگھ نے پیر کے روز ایوان میں اضافی سوالات کے جواب میں کہا کہ ایئر فورس کے پاس کل 118 اے این -32 ٹرانسپورٹ طیارے ہیں، لیکن صرف انہی طیاروں کا استعمال کیا جاتا ہے جو ہوا میں پرواز کرنے کے لئے ہر طرح سے قابل ہوں۔ انہوں نے کہا کہ اب تک 55 اے این -32 طیاروں کو 'اپ گریڈ' کیا جا چکا ہے اور باقی کو کیا جا رہا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ ان طیاروں کا بھی استعمال کیا جاتا ہے جنہیں اپ گریڈ نہیں کیا گیا ہے ، لیکن اس سے پہلے یہ دیکھا جاتا ہے کہ وہ 'ایئروردی' یعنی اڑنے کے قابل ہے بھی یا نہیں۔  وزیر دفاع نے کہا کہ گزشتہ جون میں اروناچل پردیش کے میچوکا کے پاس جو اے این -32 طیارہ گر کر تباہ ہوا تھا اسے اپ گریڈ کرکے اس کی میعاد بڑھا ئی جا چکی تھی۔ طیارہ حادثات کی وجوہات کا ذکر کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ کبھی انسانی بھول کی وجہ سے حادثہ ہوتا ہے تو کبھی بادلوں کی وجہ سے ۔تحقیقات میں سامنے آنے والی غلطیوں کو درست کیا جاتا ہے اور مؤثر قدم اٹھائے بھی گئے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اروناچل پردیش میں جو چھوٹی ہوائی پٹی ( اے ایل جی) ہے اس کی لمبائی کم ہے ، لیکن اس پر اے این -32 طیاروں کو آسانی سے اتارا جا سکتا ہے ۔ ان طیاروں کو بھی وادی سے گزر کر جانا ہوتا ہے اور اس دوران ان کے بلند چوٹیوں سے ٹکرانے کا خدشہ برقرار رہتا ہے ۔  ایک اور سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ دنیا کی تمام فضائی افواج کے بیڑے میں نئے اور پرانے دونوں طرح کے طیارے ہوتے ہیں۔ کسی بھی ایئر فورس کے پاس تمام طیارے نئے نہیں ہو سکتے ۔ اروناچل میں گزشتہ جون میں اے این -32 طیارہ کے حادثے میں 13 فوجی جوانوں کی موت ہو گئی تھی۔ یو این آئی