تازہ ترین

سادھوی پرگیہ کو پہلے دن ہی اپوزیشن کی مخالفت جھیلنی پڑی

17 جون 2019 (13 : 09 PM)   
(      )

نئی دہلی//عام انتخابات کے دوران ناتھو رام گوڈسے کے متعلق دئے گئے بیان کی وجہ سے تنازعہ کا شکار بی جے پی کی ممبر پارلیمنٹ سادھوی پرگیہ سنگھ ٹھاکر کو آج لوک سبھا میں پہلے ہی دن اس وقت اپوزیشن کی مخالفت کا سامنا کرنا پڑا جب انہوں نے حلف لیتے وقت اپنے نام کے ساتھ چنمیانند اودھیشانند گری بھی جوڑا۔ دو خواتین مارشلوں کی مدد سے لوک سبھا سکریٹری جنرل کے پاس حلف لینے پہنچیں سادھوی پرگیا نے سنسکرت زبان میں حلف لیتے ہوئے اپنے نام کے ساتھ چنمیانند اودھیشانند گری بھی جوڑا جس کی کانگریسی اراکین نے زبردست مخالفت کی۔ مخالفت کرنے والے اراکین کاکہنا تھاکہ بی جے پی رکن حلف سے متعلق ضابطہ کی خلاف ورزی کرکے اپنی مرضی سے چنمیانند اودھیشانند گری کا نام شامل کررہی ہیں۔ پروٹیم اسپیکر ویریندر کمار نے اس پر سادھوی پرگیہ کی توجہ مبذول کی اورکہا کہ وہ ایشور یا صدق دلی کے نام پر حلف لیں۔ اس پر پہلی مرتبہ پارلیمنٹ پہنچیں سادھوی پرگیہ نے کہا کہ انہوں نے اپنا پورا نام سادھوی پرگیہ سنگھ ٹھاکر چنمیانند اودھیشانند گری ریکارڈ میں درج کرایا ہے اور انہوں نے کوئی غلط نہیں کیا لیکن کانگریس اراکین،اوبے دل رول’ (ضابطہ کی پابندی کریں) کہتے ہوئے ہنگامہ کرنے لگے ۔ پروٹیم اسپیکر نے لوک سبھا سکریٹریٹ کے ملازمین سے سادھوی کو دیا گیا الیکشن کمیشن کا سرٹیفکٹ مانگا لیکن وہ وہاں دستیاب نہیں تھا۔ ہنگامہ کے دوران ہی سادھوی پرگیہ نے اپوزیشن کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا کم سے کم ایشور کے نام پر حلف تو لینے دو[؟] لیکن ہنگامہ کرنے والے اراکین نہیں مانے پھر پروٹیم اسپیکر کو اپنی سیٹ پر کھڑا ہونا پڑا۔ انہوں نے ہنگامہ کرنے والے اراکین کو یقین دلایا کہ وہ معاملے کا نوٹس لیں گے اور جو نام الیکشن سرٹیفکٹ میں درج ہوگا وہی ریکارڈ میں بھی جائے گا۔ کانگریس اراکین اس وقت تک ہنگامہ کرتے رہے جب تک سکریٹری جنرل نے پروٹیم اسپیکر کو دوسرے رکن کو حلف لینے کے لئے بلانہیں لیا۔یو این آئی