تازہ ترین

ڈاکٹروں کا ہڑتال چوتھے دن جاری،69ڈاکٹروں نے استعفیٰ سونپا

کلکتہ ہائی کوٹ کا ڈاکٹروں کے ہڑتال سے متعلق کوئی عارضی فیصلہ صادر کرنے سے انکار

15 جون 2019 (00 : 01 AM)   
(      )

کلکتہ //مریض کی موت کے بعد جونیئر ڈاکٹروں کے ساتھ مارپیٹ کے خلاف جونیئر ڈاکٹروں کا چوتھے دن بھی جاری ہے ،اس کی وجہ سے اسپتالوں میں صورت حال خراب ہوتی جارہی ہے ،کئی مریضوں کی حالت نازک بن گئی ہے وہیں اس معاملے میں کلکتہ ہائی کورٹ نے بنگا ل حکومت سے رپورٹ طلب کی ہے دوسری جانب آر جی کار میڈیکل کالج و اسپتال کے 69ڈاکٹروں نے ممتا بنرجی سے غیر مشروط معافی کا مطالبہ کرتے ہوئے اپنا استعفیٰ سونپ دیا ہے ۔ ہڑتال پر بیٹھے ڈاکٹروں کے خلاف سخت کارروائی کی دھمکی دیے جانے کی وجہ سے ممتا بنرجی سے ڈاکٹرناراض ہیں۔خیال رہے کہ جونیئر ڈاکٹروں کے ہڑتال کو ملک گیر سطح پر حمایت مل رہی ہے ،ایمس اور دیگر ریاستوں کے ڈاکٹر نے علامتی ہڑتال کرنے کا اعلان کیا ہے ۔ممتا بنرجی نے کل دوپہر ایک بجے ایس ایس کے ایم اسپتال کا دورہ کیا تھا۔وزیرا علیٰ ممتا بنرجی نے مریضوں کی صورت حال پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ہڑتال پر بیٹھے جونیئر ڈاکٹروں سے کہا کہ وہ چار گھنٹے کے اندر ہڑتال کو ختم کردیں ورنہ ان کے خلاف سخت کارروائی کی جائے گی۔وزیرا علیٰ کی وارننگک ے بعد ڈاکٹروں کی ناراضگی میں مزید اضافہ ہوگیا ہے اور ہڑتال ختم کرنے سے ڈاکٹروں نے انکار کردیا۔مرکزی وزیر صحت ہرش وردھن نے ڈاکٹروں کو ہڑتال ختم کرنے کی اپیل کرتے ہوئے حکومت بنگال سے اپیل کی ہے کہ ڈاکٹروں کی حفاظت کو یقینی بنائیں۔تاہم ایس ایس کے ایم اسپتال کے بعد این آرایس اسپتال میں ایمرجنسی سروس بحال کردیا گیا ہے ۔تاہم ب روقت وینٹی لیٹر نہیں ملنے کی وجہ سے آج ایک تین دن کے نوزائیدہ بچے کی کوت ہوگئی ہے ۔متوفی بچے کے والدنے کہا کہ علاج بروقت نہیں ملنے کی وجہ سے میرے بچے کی موت ہوگئی ہے ۔مجھے بتائیے کہ اس بچے کا قصور کیا تھا۔جونیئرڈاکٹر س 11جون سے ہی ہڑتال کررہے ہیں۔ان کا مطالبہ ہے کہ سرکاری اسپتال میں سیکورٹی اور ڈاکٹروں کی حفاظت کو یقینی بنانے کے ساتھ ڈاکٹروں پر حملہ کرنے والوں کے خلاف سخت کارروائی کو یقینی بنایا جائے ۔خیال رہے کہ این آر ایس میڈیکل کالج میں 76سالہ مریض کی موت کے بعد اس کے رشتہ داروں نے اسپتال میں حملہ کردیا جس میں دو انٹرم ڈاکٹر کی زخمی ہوگئے ۔ان میں سے ایک کی حالت اب بھی نازک بنی ہوئی ہے ۔جونیئر ڈاکٹروں کے جوائنٹ فارم کے ترجمان ارندم دتہ نے کہا کہ یہ احتجاج اس وقت تک جاری رہے گا جب تک ہمارے مطالبات تسلیم نہیں کرلیے جاتے ہیں۔دہلی کے سرکاری اور پرائیوٹ اسپتال کے ڈاکٹرس آج کلکتہ میں احتجاج کررہے جونیئر ڈاکٹروں کے احتجاج میں علامتی احتجاج اور جلوس نکال رہے ہیں۔ریذیڈنٹ ڈاکٹرس ایسوسی ایشن (RDA)سے وابستہ ڈاکٹرس ایمس کے کیمپس میں جلوس نکال رہے ہیں۔مولانا آزاد میڈیکل کالج اور اس سے وابستہ اسپتال کے ڈاکٹرس بھی احتجاج کررہے ہیں۔ڈاکٹروں کے ایک گروپ نے مرکزیا وزیر ہرش وردھن سے ملاقات کی ہے اور ان سے ڈاکٹروں پر ہوئے حملے سے متعلق آگاہ کرتے ہوئے ڈاکٹروں کی حفاظت کو یقینی بنانے کی اپیل کی۔وردھن نے ڈاکٹروں کے مطالبات پر اتفاق کرتے ہوئے اپیل کیا کہ ہڑتال ختم کرکے کام پر لوٹ جائیں۔دارے   اسناکلکتہ ہائی کورٹ نے گزشتہ چار دنوں سے جونیئر ڈاکٹروں کے ہڑتال سے متعلق کوئی بھی عارضی حکم جاری کرنے سے انکارکرتے ہوئے بنگال حکومت کو ہدایت دی ہے کہ وہ جلد سے جلداس معاملے کا حل نکالیں اور مفاد عامہ کی عرضی کا سات دنوں میں جواب دیں۔چیف جسٹس ٹی جی سبرامنیم کی قیادت والی ڈویژن بنچ نے ڈاکٹروں کے ہڑتال سے متعلق مفاد عاملہ کی عرضی کی سماعت کرتے ہوئے بنگال حکومت کو ہدایت دی کہ وہ اگلے سات دنوں سے جواب دیں، ہڑتال کو ختم کرنے کیلئے اقدامات کریں اور ریاستی حکومت اس تعطل کو ختم کرنے کیلئے کوئی حل تلاش کرے ۔ چیف جسٹس کی قیادت والی بنچ نے ہڑتال سے متعلق کوئی عارضی فیصلہ دینے سے انکارکرتے ہوئے ہڑتال پر بیٹھے ڈاکٹروں سے کہا کہ مریضوں کی بھلائی کیلئیح انہوں نے جوحلف لیا ہے اس کی پاسداری کریں۔خیال رہے کہ بنگال میں گزشتہ چار دنوں سے جونیئر ڈاکٹرس ہڑتال پر ہیں اس کی وجہ ریاست کے زیر انتظام چلنے والوں اسپتالوں کی حالت انتہائی خراب ہوچکی ہے اور پرائیوٹ اسپتال بھی متاثر ہوئے ہیں۔ممتا بنرجی کے ذریعہ ہڑتال کررہے ڈاکٹروں کو [؟]باہری[؟] قرار دیے جانے کے بعد سے ڈاکٹروں کی جانب سے اجتماعی استعفیٰ کا سلسلہ شروع ہوگیا ہے ۔این آر ایس اسپتال کے پرنسپل اور سپرنڈنٹ سمیت اب تک 82ڈاکٹروں نے استعفیٰ دیدیا ہے ۔مشہور فلمی ہستی اپرنا سین نے این آر ایس اسپتال کا دورہ کرکے ڈاکٹروں سے ہمدردی کا مظاہرہ کیا اور انہوں نے کہا کہ ممتا بنرجی کو تحمل کا مظاہرہ کرنا چاہیے ، جس طریقے سے وہ مریضوں کیلئے وزیرا علیٰ ہیں وہ ڈاکٹروں کی بھی وزیرا علیٰ ہیں۔خیال رہے کہ وزیرا علیٰ ممتا بنرجی نے کل ڈاکٹروچار گھنٹے میں ہڑتال ختم کرنے کی وارننگ دیتے ہوئے کہا کہ حکومت ان کے خلاف سخت کارروائی کرے گی۔انہوں نے کہا تھا کہ ہڑتال غیر قانونی ہے اور سپریم کورٹ کیت ہدایات موجود ہیں۔یواین آئی