سمبل مبینہ عصمت ریزی معاملہ، عدالت عالیہ کا از خود نوٹس

پولیس کو جمعہ کی صبح تک رپورٹ پیش کرنے کی ہدایت

16 مئی 2019 (00 : 01 AM)   
(      )

نیوز ڈیسک
 سرینگر//ریاستی ہائی کورٹ نے ملک پورہ سمبل میں 8 مئی کو پیش آئے مبینہ جنسی زیادتی معاملے کا از خود نوٹس لیتے ہوئے انسپکٹر جنرل پولیس سے جمعہ کی صبح دس بجے سے پہلے رپورٹ پیش کرنے کی ہدایات جاری کی ہیں۔ہائی کورٹ کی چیف جسٹس جسٹس گیتا متل اور جسٹس تاشی رابستان پر ڈویژنل بینچ نے اس معاملے کا از خود نوٹس لیتے ہوئے آئی جی پی کو حکم دیا کہ وہ کیس کی ابتک کی پیش رفت اور تحقیقات کے ضمن میں رپورٹ پیش کریں۔عدالت عالیہ نے سینئر ایڈیشنل ایڈوکیٹ جنرل بشیر احمد ڈار کے ذریعے ریاستی پولیس کو یہ ہدایات جاری کیں۔کورٹ نے بتایا کہ ایسے بھیانک واقعات کے ساتھ سختی سے نمٹنا ہے اور بچوں کو ایسے وحشت ناک واقعات سے محفوظ رکھنا ہے۔سرکاری وکیل بشیر احمد ڈار نے کہا کہ وہ شام تک کیس سے متعلق تمام پیش رفتوںکا جائزہ لیکرکورٹ کو اس حوالے سے مطلع کریں گے۔  ادھرپولیس کی خصوصی تحقیقاتی ٹیم نے چیف جوڈیشل مجسٹریٹ بانڈی پورہ کی عدالت میں اس کیس کے ضمن میں ابتک کی پیش رفت رپورٹ پیش کردی ۔خصوصی تحقیقاتی ٹیم کے ایک افسر نے منگل کو جوڈیشل مجسٹریٹ بانڈی پورہ کے سامنے رپورٹ پیش کیا۔تاہم پولیس نے کیس ڈائری ابھی پیش نہیں کی جس کے لئے پولیس کو سی جے ایم بانڈی پورہ نے جمعرات تک کا وقت دیا ہے۔منگل کے روز کیس کے بارے میں صرف سٹیٹس رپورٹ پیش کیا گیا، سی جے ایم نے خصوصی تحقیقاتی ٹیم کو جمعرات کی شام تک کیس ڈائری پیش کرنے کی ہدایات دی ہیں'۔انہوں نے مزید بتایا 'کیس ڈائری کو پیش نہ کرنے کی وجہ یہ ہے کہ کیس کی کثیرالجہتی تحقیقات جاری ہیں'۔قابل ذکر ہے کہ ریاستی پولیس نے واقعہ کی تحقیقات کے لئے ایک خصوصی تحقیقاتی ٹیم تشکیل دی ہے۔
 

بیشتر کالج اور دیگر تعلیمی ادارے بند

سرینگر//سمبل بانڈی پورہ میں مبینہ طور پر بچی کیساتھ عصمت ریزی کا واقعہ پیش آنے کیخلاف وسطی ضلع بڈگام اور ماگام میں ہڑتال کی گئی، تاہم انٹر نیٹ سہولیات بحال کی گئیں۔دونوںقصبوں میں بدھ کوبطور احتجاج ہڑتال رہی۔تجارتی ، کاروباری اور غیر سرکاری سرگرمیاں ٹھپ رہیں اور پبلک ٹرانسپورٹ بھی متاثر رہا۔ادھر انتظامیہ نے شہر سرینگر کے 10تعلیمی اداروں میں بدھ کو تدریسی عمل معطل رکھنے کا فیصلہ کیا تھا۔ حکم نامہ میں جن تعلیمی اداروں کوبند رکھنے کا فیصلہ لیا گیا اُن میں ایس پی ہائر اسکینڈری اسکول ایم اے روڑ، اسلامیہ ہائر اسکینڈری اسکول راجوری کدل، ایم پی ایم ایل ہائر اسیکنڈری اسکول باغ دلاور خان، امر سنگھ کالج گوگجی باغ، ایس پی کالج ایم اے روڑ، گاندھی میموریل کالج فتحکدل، اسلامیہ کالج حول، ڈگری کالج بمنہ، زنانہ کالج ایم اے روڑ اور زنانہ کالج نواکدل شامل ہیں۔ ادھر اسلامک یونیورسٹی اونتی پورہ میں بھی بدھ کو انتظامیہ کے حکم پر تدریسی عمل مکمل پر طور معطل رہا۔ادھربانڈی پورہ میں موبائیل انٹرنیٹ خدمات چوتھویں روز معطل رہیں۔امکانی احتجاج کے پیش نظر حکام نے سرینگر کیکالجوں ،بانڈی پورہ ، گاندربل ،بارہمولہ، سوپور، اننت ناگ، کپوارہ، بڈگام اضلاع میں قائم کالجوں اور ہائی و ہائیر سیکنڈری سکولوں کو بھی بند رکھنے کا فیصلہ لے لیا تھا جس کے پیش نظر ان تعلیمی ادروں میں درس وتدریس کا عمل پوری طرح متاثر رہاہے۔

 

ناظم تعلیم کی طلباسے اپیل

درس و تدریس میں جٹ جائیں

سرینگر// ناظم تعلیم کشمیر یونس ملک نے طلبأ سے اپیل کی ہے کہ وہ واپس آکر دوبارہ کلاس ورک میں شامل ہوجائیں تاکہ اُن کے تعلیمی ایام کا زیاں نہ ہوجس سے اُن کی تعلیمی سرگرمیوں پر منفی اثر پڑ سکتا ہے۔ایک بیان میں ناظم تعلیم نے کہا کہ سمبل واقعہ کی تحقیقات اورقانونی کارروائی کے لئے اقدامات سرعت کے ساتھ جارہی ہیں اورلأ انفورسنگ ایجنسیاں اپنا کام کررہی ہیں ۔انہوںنے تمام اضلاع کے چیف ایجوکیشن آفیسروں اور ہائر سیکنڈری سکولوں کے پرنسپلوں پر زوردیا ہے کہ وہ سکولوں میں فوری طور کلاس ورک کی بحالی کویقینی بنائیں۔

تازہ ترین