تازہ ترین

پینتھرز پارٹی کا جموں میں پانی کی قلت کو لیکر احتجاج

چناب واٹر سپلائی سے جموں کنڈی بیلٹ میں پانی کا بحران حل ہو سکتا ہے: نیرج گپتا

12 مئی 2019 (00 : 01 AM)   
(      )

 جموں //جموں و کشمیر نیشنل پینتھرز پارٹی کی جانب سے ہفتہ کے روز یہاں ٹرانسپورٹ یارڈ، نروال میں جموں کے متعدد علاقوں میں پانی کی قلت کو لیکر ایک زور دار احتجاجی مظاہرہ کیا گیا۔مظاہرین کی قیادت پارٹی کے زونل صدر نیرج گپتا کر رہے تھے۔مظاہرین سے خطاب کرتے ہوئے نیرج گپتا نے کہا کہ انہوں نے پہلے بھی دریائے چناب کے پانی کا استعمال کرکے اسے کنڈی بیلٹ میں مہیا کرنے کا مطالبہ کای تھا ،تاکہ جموں کے کنڈی بیلٹ میں موسم گرما کے دوران صارفین کو معقول پینے کا پانی فراہم ہولیکن بد قسمتی کی بات ہے کہ انتظامیہ ٹس سے مس نہیں ہو رہی ہے۔انہوںنے مبینہ الزام لگایا کہ عوام کی شکایت سُننے کےلئے وہاں کوئی نہیں ہے۔انہوں نے کہا کہ جب موسم گرما انپے شباب پر ہے ،تو جموں کے بعض علاقوں میں ہفتہ میں ایک دفعہ پانی سپلائی کیا جا رہا ہے یا متبادل تاریخوں کو پانی سپلائی کیا جاتا ہے۔انہوں نے مبینہ الزام لگایاکہ ٹوٹی ہوئی پائپوں کی وجہ سے پانی ضائع ہو جاتا ہے جسکی مرمت نہیں کی جارہی ہے،نتیجہ کے طور پر پانی کی سپلائی متاثر ہوتی ہے۔انہوں نے کہا کہ ہر سال موسم گرما میں جموں میں پانی کی قلت ہوتی ہے جس کا مستقل حل نکالنا ضروری ہے ۔انہوں نے کہا کہ اس مسلہ کا فقط حل چناب کا پانی سپلائی کرنے سے۔انہوں نے کہا کہ اولڈ واٹر پلانٹ(شتلی) ،جس سے جموں کے بیشتر علاقوں کو پانی سپلائی کیا جاتا ہے ،اب شہر کی ضروریات کو پورا نہیں کرتا ہے۔انہوںنے مزید کہا کہ بارشوں کے دوران دریائے توی کا پانی آلودہ ہو جاتا ہے ،جس سے لوگوں کو بھی آلودہ پانی سپلائی کیا جاتا ہے۔انہوں نے کہا کہ اگر دریائے چناب کا پانی جموں کے کنڈی بیلٹ کےلئے لفٹ کیا جائے گا ،تو اس سے جموں کے عوام کو کافی حد تک راحت ہوگی اور انہیں موسم گرما میں بھی پانی باقاعدگی سے مہیا ہوگا۔انہوں نے کہا کہ اس پروجیکٹ کو پہلے ہی فائلوں میں منظوری حاصل ہوئی ہے لیکن سرکار اس پروجیکٹ کو عملانے میں ناکام رہی ہے۔انہوں نے ریاستی گورنر ستیہ پال ملک سے مودبانی اپیل کی کہ وہ عرصہ دراز سے التوامیں پڑے پروجیکٹ پر کام شروع کرنے کے لئے فوری اقدام کرے ،تاکہ جموں کے عوام کو پینے کا پانی نصیب ہو۔مظاہرین میںامر چند، رمیش کمار، ببلو رام ،سورت علی، اشونی کمار،رویندر سنگھ و دیگران بھی شامل تھے۔