تازہ ترین

ہری ہر ہری ہر ہری ہر ہری

17 مارچ 2019 (00 : 01 AM)   
(      )

ہوئی برف باری جو اِمسال ہے، زمانہ ہوا اُس سے بے حال ہے
بِچھا ہر طرف برف کا جال ہے، عمارت گِری اور پامال ہے
ہر اِک شے تلے برف کے ہے دھری
ہری ہر ہری ہر ہری ہر ہری
نہیں برف ہے اِک یہ سیلاب ہے، کِتابِ حوادث کا اِک باب ہے
جہاں جو بھی ہے،ہے مقّید وہیں، مِلن ایک دوجے کا اِک خواب ہے
مُلاقات باہم ہے خطروں بھری
ہری ہر ہری ہر ہری ہر ہری
جہاں پر بھی جس کی ہے کُٹیا کھڑی، وہ ہے برف میں پوری پوری گڑھی
مکینوں میں اُفتاد ایسی پڑی، کہ ہے زندگی بس گھڑی دو گھڑی
ہے ہر آنکھ میں آنسوئوں کی جھڑی
ہری ہر ہری ہر ہری ہر ہری
نہ پانی نہ پاور نہ ٹی وی بحال، نہ ہے فون زندہ نہ لکڑی کا ٹال
مَیں کیا ابتری کی دوں اپنی مثال، نہ آٹا نہ چاول نہ ہے گھر میں دال
ہے اوپر سے سردی بھی کیا سرپھری
ہری ہر ہری ہر ہری ہر ہری
بھرے باغ سیبوں کے ہیں بے ثمر، چناروں کی شاخیں خمیدہ کمر
ہراساں ہے حالات سے ہر بشر، نہ ہے اس کا سرکار پر کچھ اثر
سُنائے کِسے کون کھوٹی کھری
ہری ہر ہری ہر ہری ہر ہری
 
عُشّاق ؔکِشتواڑی
صدر انجُمن ترقٔی اُردو (ہند) شاخ کِشتواڑ
رابطہ  ـ:  9697524469