تازہ ترین

غزلیات

24 فروری 2019 (55 : 10 PM)   
(      )

 وصل کے خواب کو پلکوں پہ بٹھائے رکھا 
ہجر کی آنکھ میں ساون کو بُلائے رکھا 
 
چشمِ پرنم کو دریچے پہ سجائے رکھا 
تیری آمد پہ تبسم کو بچائے رکھا
 
کتنے شعروں کو زبانوں پہ چڑھائے رکھا 
ہم نے لوگوں کے ضمیروں کو جگائے رکھا 
 
بارشوں کو بھی برسنے کا ہنر دیتا ہے 
بادلوں کو بھی سمندر سے اٹھائے رکھا 
 
تیرگی ہار نہ مانے تو تمہاری قسمت 
تیز آندھی میں چراغوں کو جلائے رکھا 
 
تاکہ اشعار میں تصویر اُتر آئے تری 
بوجھ پلکوں کا نگاہوں سے اٹھائے رکھا 
 
کم کبھی زور ہواؤں کا بھی ہوگا عادل ؔ
بادبانوں کو سفینے پہ کُھلائے رکھا 
ؤؤؤؤؤ
اشرف عادلؔ
کشمیر یونیورسٹی حضرت بل سرینگر کشمیر 
رابطہ؛ 9906540315
 
 
درد کے راستوں میں رہتا ہے
وہ فقط سازشوں میں رہتا ہے
گھپ اندھیرا گھروں میں رہتا ہے
بغض جب تک دلوں میں رہتا ہے
اس کو دنیا نظر میں رکھتی ہے
وہ سدا آئینوں میں رہتا ہے
خار جیسے گلوں میں رہتے ہیں
وہ مرے دوستوں میں رہتا ہے
ظلم کے بادلوں کے سائے میں
آدمی جنگلوں میں رہتا ہے
موج و طوفاں سے اس کو کیا مطلب
وہ تو بس بزدلوں میں رہتا ہے
حق کی آواز وہ نہیں سنتا
کیونکہ وہ حاکموں میں رہتا ہے
جب سے اس ماہ رخ کو دیکھا ہے
دل مرا جگنوؤں میں رہتا ہے
جب تلک ہو ہوا مخالف شمسؔ
حوصلہ شہپروں میں رہتا ہے
ؤؤؤؤؤ
ڈاکٹر شمسؔ کمال انجم
صدر شعبۂ عربی / اردو/ اسلامک اسٹڈیز، 
بابا غلام شاہ بادشاہ یونیورسٹی راجوری
موبائل نمبر؛9419103564
 
 
 
جس عمل میں ثواب ہوتا ہے
وہ مرا انتخاب ہوتا ہے
جب بھی آتا ہے سامنے میرے
رخ پہ اس کے حجاب ہوتا ہے
زندگی احتیاط سے گزرے
ہر گھڑی کا حساب ہوتا ہے
بے وجہ غرق عشق میں رہنا
اک طرح کا عذاب ہوتا ہے
کرتا ہوں جب محاسبہ اپنا
شرم سے دل یہ آب ہوتا ہے
ختم ہو جاتی ہے حیات مگر
کوئی پورا نہ خواب ہوتا ہے
میرے ہر اک سوال پر کاشف ؔ
نعم اس کا جواب ہوتا ہے
 
اظفر کاشف پوکھریروی 
متعلم :MANUU بی ایڈ کالج بڈگام سرینگر 
9149833563
 
 
اپنے اندر سے نکل رہا ہوں میں 
مسئلوں میں پگھل رہا ہوں میں 
کیسے کرلو گے تم جدا مجھ کو 
تیری ذات میں گُُھل رہا ہوں میں 
اک نئی سوچ کے تعاقب میں
من کے آنگن میں ٹہل رہا ہوں میں 
یہ ترا بار بار کا شکوہ 
کب تیری زلف کا  بل رہا ہوں میں 
کھا گیا مجھ کو ہر کوئی چلتے 
مسکراہٹ کا پھل رہا ہوں میں 
کی نگاہ نا کبھی اور کے حق پر 
اپنے حق پر اٹل رہا ہوں میں 
زندگی کے سفر میں اے خوشحال ؔ
تھکا ہارا سہی چل رہا ہوں میں 
 
میر خوشحال احمد 
رابطہ؛کرناہ دلدار،موبائل نمبر؛9622772188
 
 
سُن رہا تھا جسے مثالوں میں
آج پایا اسے کتابوں میں
وہ اشاروں میں کہہ گیا کیا کچھ
میں تو اُلجھا رہا سوالوں میں
وقتِ آخر سنور گئی قسمت
موت آئی جو اں کی بانہوں میں
اپنے دکھ درد بھول جاتا ہوں
چل دیا جب وفا کی راہوں میں
موسموں کا بھی کیا بھروسہ ہے
لُٹ گیا جب چمن بہاروں میں
کچھ نہیں چاہئے اب اور سعیدؔ
ان کے پائے نشاں ہیں راہوں میں
 
سعید احمد سعیدؔ
رابطہ؛ احمد نگر، سرینگر
 موبائل نمبر؛8082405102
 
 
ہنستا کوئی، کوئی روتاہے 
ہونا ہے جو، وہ ہوتاہے 
راتیں گزارے کروٹ کروٹ
شخص وہ دِن بھر جو سوتا ہے
کیسے بھی حالات ہوں، اُن سے 
زیست محض اک سمجھوتا ہے
کِس کو کس کی فکر یہاں ہے 
ہوتا ہے جو سو ہوتا ہے 
نہیں گِلہ کچھ کسی سے صورتؔ 
وہی کٹے گا جو بوتا ہے
 
صورت سنگھ
رام بن ,9419364549
 
 
 
 
کون یہ تانے ہوئے تلوار ہیں دونوں طرف
کس کی شہہ پر برسرِ پیکار ہیں دونوں طرف
سر پھرے ہی درپے آزار ہیں دونوں طرف
ورنہ سب ٹکرائو سے بیزار ہیں دونوں طرف
عام انساں قتلِ ناحق کا بھلا حامی ہو کیوں؟
خوش فقط گنتی کے کچھ خوں خوار ہیں دونوں طرف
سرحدوں پر بھیجتے ہیں مارنے مرنے جنہیں
سب کے سب مجبور ہیں نادار ہیں دونوں طرف
موت کا یہ رقص کیوں ہے لازمی ان کے لئے؟
کنِ اصولوں کے علم بردار ہیں دونوں طرف
آگ میں گھی ڈالنا محبوب اُن کا مشغلہ
ایک سے سب قوم کے غم خوار ہیں دونوں طرف
 
حسن انظرؔ 
سرینگر،رابطہ۔9419027593
 
 
 
قیامت کی ذہانت ہے کِسی فن کار کے پیچھے
کئی کردار ہیں مخفی کِسی کردار کے پیچھے
کئی باتیں ہیں پوشیدہ کِسی اِظہار کے پیچھے
کئی راہیں نکلتی ہیں رَہِ پُر خار کے پیچھے
عبث بد نام کرتا تھا میں غیروں کو زمانے میں 
میرے اپنے ہی شامل تھے تیرے انکار کے پیچھے
تسلسل یوں ہی قائم تو نہیں رہتا یہ دُنیا کا 
کوئی تو کار فرما ہے حسیں سنسار کے پیچھے
حفاظت کے لئے تعمیر کی تھی شوق سے ہم نے
کِسے معلوم تھا آفت بھی تھی دیوار کے پیچھے
فقط خوشبو نہیں سونگھو کبھی تو غور سے سوچو
دبے ہیں بیج کتنے اِس گُلِ گلزار کے پیچھے
سفر میں ہی مگن رہنا کبھی پیچھے نہ ہٹنا تم
ملیں گی منزلیں تم کو رَہِ دشوار کے پیچھے
 
عبدالجبّاربٹ
169،گوجر نگر ،جموں۔9906185501
 
جونمایاں ہووہ نشِاں ہوُں میں 
کون کہتاہے بے زُباں ہوں میں
اِس پہ بکھری ہیں مُشکلیں کیاکیا
پھربھی رہ پر رواں دواں ہُوں میں 
ساری دُنیاکی ہے خبرمجھ کو
کیاکہوں آپ کوکہاں ہُوں میں 
اُس کی اوقات کوسمجھتاہوں 
اِس زمانے کارازداں ہُوں میں 
زندگی کاوقار تھاجس سے 
ایسی تہذیب کانِشاں ہوں میں 
کِس کی ہمت کہ مجھ کوروک سکے 
ایک طوفان ہوں رواں ہُوں میں 
میں بڑھاپے کے ہُوں قریب ہتاشؔ
حق تویہ ہے ابھی جواں ہوں میں
 
پیارے ہتاشؔ
دور درشن گیٹ لین جانی پورہ جموں
موبائل نمبر؛8493853607
 
 
میرے ہمدم مجھے بُھلا کر، بولو کیا کچھ پایا تُو نے
میرے جسم کو خاک بنا کر، بولو کیا کچھ پایا تُو نے
اتنی تھی تقصیر ہماری تجھ کو اپنا بنا کے رکھا 
کوئی بھلا یہ ہم سے پوچھے، بولو کیا کچھ پایا تو نے
لمبی کالی ہجر کی راتیں، خون جمانے والی سردی
تنہا چھوڑ کے ایسے ہم کو، بولو کیا کچھ پایا تونے
میں بے زر ہوں سچ ہے لیکن دل کا مستغنی جو ٹھہرا
جوڑ کے زرداروں سے رشتے، بولو کیا کچھ پایا تو نے
تیرے چہرے کی وہ رونق کہاں گئی؟ معلوم نہیں ہے!
ہونٹوں کی مسکان بُھلا کر بولو کیا کچھ پایا تو نے
مجھے بُھلانے کی یہ کوشش مرزاؔ جی ناکام رہے گی
خود پہ اتنے ستم کئے ہیں، بولو کیا کچھ پایا تو نے
 
شارق نبی وانی مرزاؔ
کشمیر یونیورسٹی 
رابطہ؛پلوامہ ،موبائل نمبر -6005365751
 
 
حقیقت یا فسانہ ہے 
مجھے اب آزمانہ ہے 
محبّت ہے اگر مجھ سے 
چلے آئو بہانہ ہے 
یہی تو عمر ہے ہوتی 
کہ دِل ہوتا دیوانہ ہے 
بھروسہ زندگی کا کیِا؟
کہ کتنا آب و دانہ ہے 
محّبت ہے مجھے تجھ سے 
منی ؔ گاتا ترانہ ہے 
 
  ہریش کمار منیؔ بھدرواہی
hkmani1990@gmail.com
 
 
جنون دل کا بہت ثواب ہوا
اگر چہ دل بہت خراب ہوا
صبرِ ایوب دل میں پیدا ہوا
موت میں زندگی کا شباب ہوا
دشت میں صبا یہ کہنے لگی 
کیا قیامت ہوئی تو سراب ہوا
عشق میں تیرے خود فنا ہوا 
دیکھ ظالم کیسا جواب ہوا
ستمگر ٹھوکروں میں یہ پیام ملا
پروانہ نہ رہا شمع آب ہوا
 
پیرزادہ منظور احمد منظور
قاری گام کٹہار اسلام آباد
فون؛9622849642
 
 
ٹیڑھی میڑھی اُلٹی بات 
مت کر ایسی ویسی بات 
سوچ رہا ہوں کچھ دن سے 
کہہ دوں اب کے من کی بات 
وصل میں سب کچھ جائز ہے 
ایسی ویسی گندی بات 
جب بھی میں نے لب کھولے 
مُنہ سے نکلی تیری بات 
کچھ کچھ ہونے لگتاہے 
مت کر اتنی پیاری بات 
خالی کاغذ بھیجا ہے 
خود سمجھے گی میری  بات 
کیا؟ مجھ سے تم عشق کرو گی 
عشق نہیں ہے چھوٹی  بات 
تُو بھی اچھا ہے لیکن 
اِندرؔکی ہے اور ہی بات
 
اِندرؔ سرازی 
ضلع ڈوڈہ پریم نگر 7006658731;
 
 
کیا فرق پڑے گا،مجھے آزماکے کھوجانے سے
دنیا رُکتی تو نہیں ہے کسی کے چلے جانے سے
ہاتھ بڑھایا تھا تم نے مجھ سے دوستی کے لیے
کیا پتہ تھا دل چیر کے لے گا اس بہانے سے
تنہا رہنے کی اب تو عادت ہوگئی ہے مجھے
ضمیر اجازت نہیں دیتا کسی کو منانے سے
ہم تو بندے ہیں خدا کے اور اُمتی رسولؐ کے
ہم تو بہکتے نہیں ہیں کسی کے بہکانے سے
اپنے ہی خیالوں میں ڈوبا ہے ہر کوئی یہاں
عبرت بھی نہیں ہوتی روز کسی کو دفنانے سے
سکھایا جس نے ہمیں زندگی جینے کا سلیقہ
شرم کیوں کرتے ہیں اُن ؐکی سنت اپنانے سے
زندگی میں بلالؔ کبھی کسی کاعادی مت بننا
تکلیف بہت ہوتی ہے کسی کے ٹھکرانے سے
 
بلال احمد بلالؔ
وہی پورہ پلوامہ کشمیر،
موبائل نمبر؛7006566968