سوائن فلو سے دل کادورہ یا دماغ کی نس پھٹنے کاخطرہ:ڈاک

12 فروری 2019 (00 : 01 AM)   
(      )

نیو ڈسک
سرینگر//ڈاکٹرس ایسوسی ایشن آف کشمیرنے کہا ہے کہ سوائن فلو کے حملہ سے دل کا دورہ پڑنے یا دماغ کی نس پھٹنے کے امکانات میں اضافہ ہوتا ہے۔ایک بیان میں ڈاکٹرس ایسوسی ایشن کے صد رڈاکٹر نثارالحسن نے کہا کہ سوائن فلو بیماری میں مبتلا ء ہونے کے بعد مریض کو دل کادورہ پڑنے یادماغ کی نس پھٹنے کاخطرہ بڑھ جاتا ہے۔نیو انگلینڈ جرنل آف میڈیسن میں شائع ایک کینیڈین تحقیق کا حوالہ دیتے ہوئے ڈاکٹر نثار نے کہاکہ جولوگ سوائن فلو کی بیماری میں مبتلاء ہوتے ہیں انہیں بیماری کے پہلے ہفتے کے دوران دل کادورہ پڑنے کا امکان چھ گنا زیادہ ہوتا ہے ۔انہوں نے کہا یہ خطرہ زیادہ بزرگ افراد یا پہلے سے ہی دل کے کسی عارضے میں مبتلاء مریضوں کو زیادہ ہوتا ہے ۔ ڈاکٹر نثار نے کولمبیایونیورسٹی امریکہ کی ایک اورتحقیق کاحوالہ دیتے ہوئے کہا کہ سوائن فلو سے دماغ کی نس پھٹنے جسے عرف عام میں اسٹروک بھی کہا جاتا ہے ،کے امکانات40فیصدبڑھ جاتے ہیں ۔بیماری کے پہلے 15روزیہ خطرہ زیادہ ہوتا ہے ،لیکن فلو کے مریضوں کے اسٹروک ہونے کااحتمال سال بھررہتا ہے ۔ڈاکٹر نثار نے کہا کہ اس فلو سے خون کی نالیوں کے اندرون میں چربی جمع ہوتی ہے  اور یہ چربی نکل کر دل یا دماغ میں پھنس جاتی ہے اورخون کے بہائو میں رکاوٹ پیدا کرتی ہے ۔انہوں نے کہا کہ فلو سے خون کے ذرات کے جمنے کا عمل شروع ہوتا ہے جس سے خون کی نالیوں میں خون منجمند  ہونے کا خطرہ بڑھ جاتا ہے ۔انہوں نے مزید بتایا کہ موسم سرما میں کشمیر میں مریضوں میں دل کادورہ پڑنے یا دماغ کی نس پھٹنے کے واقعات میں دوگنااضافہ ہوتا ہے اور اس کی  بڑی وجہ فلو ہے۔انہوں نے کہا کہ خطرہ  ہائی بلڈ پریشر ، ذیابیطس ا سگریٹ نوشی کرنے والوں میں بھی ایسا ہی ہے ۔ڈاکٹر نثار نے کہا کہ فلو کی مدافعت کا ٹیکہ لگانے سے دل کادورہ یا دماغ کی نس پھٹنے کے امکانات کو کم کیاجاسکتا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ تحقیق سے پتہ چلا ہے کہ جن لوگوں نے ٹیکہ لگایا ہوتا ہے اُن میں دل کادورہ یا دماغ کی نس پھٹنے کا امکان55فیصد کم ہوتا ہے ۔بہتر ہوگا اگر یہ ٹیکہ اکتوبر کے مہینے میں لگایا جائے لیکن اگر اس کے بعد بھی ٹیکہ لگایا جائے تو کوئی حرج نہیں ہے بلکہ ٹیکہ کاری فلو کے پورے سیزن میں جاری رہنی چاہیے۔